Monthly Archives: January 2010

برسوں کے بعد دیکھا اک شخص دلربا سا ۔ ۔ ۔

Standard

 


برسوں کے بعد دیکھا اک شخص دلرُبا سا


اب ذہن میں نہیں ہے پر نام تھا بھلا سا

 

ابرو کھنچے کھنچے سے آنکھیں جھکی جھکی سی


باتیں رکی رکی سی لہجہ تھکا تھکا سا

 

الفاظ تھے کہ جگنو آواز کے سفر میں


بن جائے جنگلوں میں جس طرح راستہ سا

 

خوابوں میں خواب اُسکے ، یادوں میں یاد اُسکی


نیندوں میں گھل گیا ہو جیسے رَتجگا سا

 

پہلے بھی لوگ آئے کتنے ہی زندگی میں


وہ ہر طرح سے لیکن اوروں سے تھا جدا سا

 

اگلی محبتوں نے وہ نامرادیاں دیں


تازہ رفاقتوں سے دل تھا ڈرا ڈرا سا

 

کچھ کہ مدتوں سے ہم بھی نہیں تھے روئے


کچھ زہر میں بُجھا تھا احباب کا دلاسا

 

پھر یوں ہوا کے ساون آنکھوں میں آ بسے تھے


پھر یوں ہوا کہ جیسے دل بھی تھا آبلہ سا

 

اب سچ کہیں تو یارو ہم کو خبر نہیں تھی


بن جائے گا قیامت اک واقعہ ذرا سا

 

تیور تھے بے رُخی کے انداز دوستی کے


وہ اجنبی تھا لیکن لگتا تھا آشنا سا

 

ہم دشت تھے کہ دریا ہم زہر تھے کہ امرت


ناحق تھا زعم ہم کو جب وہ نہیں تھا پیاسا

 

ہم نے بھی اُس کو دیکھا کل شام ااتفاقاً


اپنا بھی حال ہے اب لوگو فراز کا سا

 

کلام : احمد فراز

 

Note: if you can’t view the Urdu characters correctly please download and install urdu fonts from following links:

http://www.crulp.org/software/localization/Fonts/nafeesNastaleeq.html

http://www.crulp.org/software/localization/Fonts/nafeesPakistaniWebNaskh.html

Advertisements

آج کی صبح کے نام

Standard

آج کی خوبصورت اور رومینٹک صبح کے نام ۔ ۔ ۔

 
 

اک صبح جب سویرے سویرے ،

سرمئی سے اندھیر کی چادر ہٹا کے ،

اک پربت کے تکیئے سے ،

سورج نے جو سر اٹھایا ۔ ۔ ۔ تو دیکھا ،

۔ ۔ ۔

دل کی وادی میں چاہت کا موسم ہے

اور یادوں کی ڈالیوں پر

ان گنت بیتے لمحوں کی کلیاں مہکنے لگی ہیں

ان کہی ان سنی آرزو ۔ ۔ ۔ آدھی سوئی ہوئی آدھی جاگی ہوئی

آنکھیں ملتے ہوئے دیکھتی ہے ،

لہر در لہر ، موج در موج ۔ ۔ ۔ بہتی ہوئی زندگی

جیسے ہر ایک پل نئی ہے ، اور پھر بھی وہی ۔ ۔ ۔ ہاں ، وہی زندگی

جس کے دامن میں ایک محبت بھی ہے ، اور احساس بھی

پاس آنا بھی ہے ، دور جانا بھی ہے ،

اور یہ احساس ہے

وقت جھرنے سا بہتا ہوا ، جا رہا ہے ، یہ کہتا ہوا

 
 

دل کی وادی میں چاہت کا موسم ہے

اور یادوں کی ڈالیوں پر

ان گنت بیتے لمحوں کی کلیاں مہکنے لگی ہیں ۔ ۔ ۔

 
 

کیوں ہوا آج یوں گا رہی ہے

کیوں فضا رنگ چھلکا رہی ہے

میرے دل بتا آج ہونا ہے کیا

چاندنی دن میں کیوں چھا رہی ہے

زندگی کس طرف جا رہی ہے

میرے دل بتا ، کیا ہے یہ سلسلہ ؟

 
 

جہاں تک بھی جائیں نگاہیں ، برستے ہیں جیسے اجالے

سجی آج کیوں ہیں یہ راہیں ، کھلے پھول کیوں ہیں نرالے

خوشبوئیں کیسی یہ بہہ رہی ہیں

دھڑکنیں جانے کیا کہ رہی ہیں

میرے دل بتا ، یہ کہانی ہے کیا ؟

“Sad” New Year

Standard

Just thought of greeting you a little differently 🙂

 

گھڑی کی سوئیاں آگے بڑھـیں

کیلنڈر کے صفحے پلٹ گـئے

نیا سال تو آ گیا لـیکن

غم وہی پرانے رہے ۔ ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اب  کے   برس    کچھ    ایسا    کرنا

اپنے       پچھلے      بارہ      ماہ       کے

دکھ         سکھ         کا           اندازہ          کرنا

سادہ     سا      اک    کاغذ      لے کر

بھولے    بسرے     پل   لکھ   لینا

اپنے     سارے      پل     لکھ     لینا

سارے     دوست      اکٹھے     کرنا

ساری      صبحیں        حا ضر           کرنا

ساری       شامیں        پاس         بلانا

اور     علاوہ      ان       کے      دیکھو

سارے موسم دھیان میں رکھنا

اک    اک    یاد    گمان   میں    رکھنا

پھر          محتاط             قیاس             لگانا

گر تو    خوشیاں     بڑھ       جاتی    ہیں

تو      پھر     میری       طرف       سے

تم        کو           نیا    سال          مبارک

اور        غم         بڑھ          جاو یں        تو

مت     بے     کار     تکلف     کرنا

دیکھو          پھر          تم           ایسا   کرنا

میری    خوشیاں  تم      لے     لینا

اپنے     غم     مجھ      کو دے       دینا