Monthly Archives: June 2011

Jaanti ho mujhe kia pasand hai ? (جانتی ہو مجھے کیا پسند ہے؟)

Standard


تم

جانتی ہو مجھے کیا پسند ہے؟

گلاب کی مہک

رات کی چاندنی

شام کی اداسی

سردیوں کی راتیں

اور

اس نظم کا ۔۔۔ پہلا لفظ

Tum

Jaanti ho mujhe kia pasand haI ?

Gulaab ki mehaK

Raat ki chaandnI

Shaam ki udaasI

Sardio’n ki raataiN

aur

Is nazm ka .. pehla lafZ

Advertisements

Ishq-e-Lahaasil (عشقِ لاحاصل)

Standard

سائڈ ٹیبل پہ چائے کا کپ ۔ ۔

ہاتھ میں عشق پہ لکھی گئی ایک داستاں کی کتاب

اور دل یہ بھی چاہے کہ چھت پہ جا کے ۔ ۔

رات کی تنہائی ۔ ۔

چاند کی اداسی ۔ ۔

۔ ۔ اور لمحوں کی بےبسی کو

اپنے اندر اتار کے ۔ ۔

خود کو عشقِ لاحاصل میں قید کر لیا جائے

اور ایسے میں کسی کی یاد نہ آئے

۔ ۔ ۔

ںا مُمکن

Side table pe chaey ka cuP..

Hath mein ISHQ pe likhi gai ek dastaan ki kitaB..

Aur dil ye bhi chahay k chhat pe ja K..

Raat ki tanhaI..

Chand ki udasI.. …

Aur lamhon ki be-basi kO..

Apne andar utaar K..

Khud ko ISHQ-E-LAHASIL mein qaid kr liya jaeY..

Aur Aisay mein kisi ki yad na aaeY..

Na-mumkiN..!

Mausam Ki Adaa Dekh ke Yaad Aya (موسم کی ادا دیکھ کے یاد آیا۔)

Standard

اب کے تجدیدِ وفا کا نہیں امکاں جاناں

یاد کیا تجھ کو دلائیں تیرا پیماں جاناں

یونہی موسم کی ادا دیکھ کے یاد آیا

کس قدر جلد بدل جاتے ہیں انساں جاناں

دل یہ کہتا ہے کہ شاید ہو افسردہ وہ بھی

دل کی کیا بات کریں، دل تو ہے ناداں جاناں

جس کو دیکھو وہی زنجیر با پا لگتا ہے

شہر کا شہر ہوا داخلِ زنداں جاناں

اب تیرا ذکر بھی شاید ہی غزل میں آئے

اور سے اور ہوا درد کا عنواں جاناں

احمد فراز

Ab ke tajdeed-e-wafa ka nahin imka’n jana’n

Yaad kya tujhko dilayain tera paima’n jana’n !

Yunhi mausam ki adaa dekh ke yaad aya

Kis qadar jald badal jate hain insaa’n jana’n !

Dil ye kehta hai ke shayad ho fasurda tu bhi

Dil ki kya baat karain … dil to hai nadaa’n jana’n !

Jis ko dekho wohi zanjeer-ba-pa lagta hai

Sheher ka sheher hua dakhil-e-zinda’n jana’n !

Ab tera zikr bhi shayad hi gazal main aye

‘Aur’ se ‘Aur’ hua dard ka unvaa’n jana’n !!!!

~Ahmad Faraz