Monthly Archives: May 2012

Kaash main tere haseen haath ka kangan hota (کاش میں تیرے حسیں ہاتھ کا کنگن ہوتا)

Standard


کاش میں تیرے حسیں ہاتھ کا کنگن ہوتا

تُو بڑے پیار سے بڑے چاوْ سے بڑے مان کے ساتھ

اپنی نازک سی کلائی میں چڑھاتی مجھ کو

اور بےتابی سے فرقت کے خزاں لمحوں میں

تو کسی سوچ میں ڈوبی جو گھماتی مجھ کو

میں تیرے ہاتھ کی خوشبو سے مہک سا جاتا

جب کبھی موڈ میں آ کر مجھے چوما کرتی

تیرے ہونٹوں کی حدت سے دہک سا جاتا

رات کو جب بھی تُو نیندوں کے سفر پر جاتی

مَرمَریں ہاتھ کا اک تکیہ بنایا کرتی

میں ترے کان سے لگ کر کئی باتیں کرتا

تیری زلفوں کو تیرے گال کو چوما کرتا

جب بھی تو بند قبا کھولنے لگتی جاناں

کاپنی آنکھوں کو ترے حُسن سے خیرہ کرتا

مجھ کو بےتاب سا رکھتا تیری چاہت کا نشہ

میں تری روح کے گلشن میں مہکتا رہتا

میں ترے جسم کے آنگن میں کھنکتا رہتا

کچھ نہیں تو یہی بے نام سا بندھن ہوتا

کاش میں تیرے حسیں ہاتھ کا کنگن ہوتا

وصی شاہ


Kaash main tere hansee’n haath ka kangan hota

tu baray pyar say, chao say, baray maan ke saath

apni nazuk see kalaee main charhati mujh ko

aur betaabi say furqat ke khiza’n lamhon main

tu kisi soch main doobi jo ghumati mujh ko

main tere haath ki khushbu say mehak sa jata

jab kabhi mood main aa kar mujhe chuma karti

tere honton ki main hiddat say dehak sa jata

raat ko jab bhi tu neend ke safar pe jaati

marmari’n hath ka eik takiya banaya karti

main tere kaan say lag kar kai baatain karta

teri zulfon ko tere gaal ko chooma karta

mujh ko betaab sa rakhta teri chaahat ka nasha

main teri rooh ke gulshan main mehakta rehta

main tere jism ke aangan main khanakta rehta

kuch nahin tu yehi be-naam sa bandhan hota

kaash main tere hansee’n haath ka kangan hota

Note: To best view this post please install this beautiful font: Jameel Noori Kasheeda 2.0 Font

Advertisements

اِک ڈاکو ڈاکا ماریا

Standard

 

اِک ڈاکو ڈاکا ماریا

میرا لُٹ لیا مال متاع

میں ہسدا وسدا رہ گیا

میری کوئی نہ چلی واہ

دیاں سِیساں اوس بے ترس نُوں

جس جُھگا دِتا ڈھاہ

اوہ ڈاڈھا ڈھول ڈکیت اے

توں ڈاڈھا بے پروا

 

اشفاق احمد

 

(source)

Tum jo hanstay ho (تم جو ہنستے ہو)

Standard

 

تم جو ہنستے ہو تو پھولوں کی ادا لگتے ہو

اور چلتے ہو تو اک بادِ صبا لگتے ہو

 

کچھ نہ کہنا میرے کندھے پہ جھکا کر سر کو

کتنے معصوم ہو ، تصویرِوفا لگتے ہو

 

بات کرتے ہو تو ساغر سے کھنک جاتے ہو

لہر کا گیت ہو ، کوئل کی صدا لگتے ہو

 

کس طرف جاُوَ گے زلفوں کے یہ بادل لے کر؟

آج مچلی ہوئی ساون کی گھٹا لگتے ہو

 

تم جسے دیکھ لو ، پینے کی ضرورت کیا ہے

زندگی بھر جو رہے ، ایسی ادا لگتے ہو

 

میں نے محسوس کیا تم سے جہ باتیں کر کے

تم زمانے میں ۔ ۔ ۔ زمانے سے جدا لگتے ہو

 


 

Tum Jo Hastey Ho To Phoolon Ki adaa Lagte Ho

Aur Chaltey Ho to Ek Baad-e-Saba Lagte Ho

 

Kuch Na Kehna Mere Kandhe Pe Jhuka Ker Sar Ko

Kitne Masoom Ho, Tasveer-e-Wafa Lagte Ho

 

Baat Karte Ho Tou Saaghar Se Khanak Jaate Ho

Leher Ka Geet Ho, Koyal Ki Sada Lagte Ho

 

Kis Taraf Jao ge Zulfon K yeh Baadal Le Ker

Aaj Machli Hui Saawan Ki Ghataa Lagte Ho

 

Tum Jisey Dekh Lo Peeney Ki Zaroorat Kya Hai

Zindagi Bhar Jo Rahe Aisa Nasha Lagte Ho

 

Maine Mehsoos Kiya Tum Se jo Baatein Kar k

Tum Zamaane Mein Zamaane Se Judaa Lagte Ho

 

Note: But I have this image since a long time ago and don’t remember where I got it from so if anyone knows or the owner itself notifies I will be happy to reference or if he/she has any objection I can take it down.