Kaash main tere haseen haath ka kangan hota (کاش میں تیرے حسیں ہاتھ کا کنگن ہوتا)

Standard


کاش میں تیرے حسیں ہاتھ کا کنگن ہوتا

تُو بڑے پیار سے بڑے چاوْ سے بڑے مان کے ساتھ

اپنی نازک سی کلائی میں چڑھاتی مجھ کو

اور بےتابی سے فرقت کے خزاں لمحوں میں

تو کسی سوچ میں ڈوبی جو گھماتی مجھ کو

میں تیرے ہاتھ کی خوشبو سے مہک سا جاتا

جب کبھی موڈ میں آ کر مجھے چوما کرتی

تیرے ہونٹوں کی حدت سے دہک سا جاتا

رات کو جب بھی تُو نیندوں کے سفر پر جاتی

مَرمَریں ہاتھ کا اک تکیہ بنایا کرتی

میں ترے کان سے لگ کر کئی باتیں کرتا

تیری زلفوں کو تیرے گال کو چوما کرتا

جب بھی تو بند قبا کھولنے لگتی جاناں

کاپنی آنکھوں کو ترے حُسن سے خیرہ کرتا

مجھ کو بےتاب سا رکھتا تیری چاہت کا نشہ

میں تری روح کے گلشن میں مہکتا رہتا

میں ترے جسم کے آنگن میں کھنکتا رہتا

کچھ نہیں تو یہی بے نام سا بندھن ہوتا

کاش میں تیرے حسیں ہاتھ کا کنگن ہوتا

وصی شاہ


Kaash main tere hansee’n haath ka kangan hota

tu baray pyar say, chao say, baray maan ke saath

apni nazuk see kalaee main charhati mujh ko

aur betaabi say furqat ke khiza’n lamhon main

tu kisi soch main doobi jo ghumati mujh ko

main tere haath ki khushbu say mehak sa jata

jab kabhi mood main aa kar mujhe chuma karti

tere honton ki main hiddat say dehak sa jata

raat ko jab bhi tu neend ke safar pe jaati

marmari’n hath ka eik takiya banaya karti

main tere kaan say lag kar kai baatain karta

teri zulfon ko tere gaal ko chooma karta

mujh ko betaab sa rakhta teri chaahat ka nasha

main teri rooh ke gulshan main mehakta rehta

main tere jism ke aangan main khanakta rehta

kuch nahin tu yehi be-naam sa bandhan hota

kaash main tere hansee’n haath ka kangan hota

Note: To best view this post please install this beautiful font: Jameel Noori Kasheeda 2.0 Font

Advertisements

30 responses »

  1. gali lagakar tiree tasweer ko sabh shikwi snua liti hi.
    zakhm mili hi jitni mohbbat mi ounhi dil mi chupa liti hi.
    phul hi phul khili hamisha tiree raho mi.
    jitni kanti hi ounhi ham outha liti hi.
    tum to kahti thee Na ghabrao mi naseeb hu tumhara.
    abh ounkee biwafai ko apna mukddar bana liti hi.
    shikwa kissi kari ouskee biwafai ka a dost .
    dil ki zakhmo pi apni aasuw ki marham saja liti hi.
    roz karti hi wada ki bhula digi ham ounko .
    our har roz ham apna yi wada bhula diti hi.
    dard ka boz zabh dil pi kuch ziyada ho jata hi.
    phir chihri pi apni ham muskurahat saja liti hi.
    dil hi kafi hi tiri yadh mi jalni ki liyi.
    sham hoti hi charago ko bujha diti hi.

    -SAMEER

    • wah sameer sahab . bohat aala . shukriya 🙂

      maine aap ki is ghazal ko urdu main neechay likh dia hai
      —-
      گلے لگا کر تیری تصویر سب شکوے سنا لیتے ہیں
      زخم ملیں ہیں جتنے محبّت میں انھیں دل میں چھپا لیتے ہیں

      پھول ہی پھول کھلیں ہمیشہ تیری راہوں میں
      جتنے کانٹے ہیں انھیں ہم اٹھا لیتے ہیں

      تم کہتی تو تھی نہ گھبراؤ میں نصیب ہوں تمہارا
      اب ان کی بے وفائی کو اپنا مقدّر بنا لیتے ہیں

      شکوہ کس سے کریں ان کی بے وفائی کا اے دوست
      دل کے زخمو پی اپنے آنسووں کا مرہم سجا لیتے ہیں

      روز کرتے ہیں وعدہ کہ بھلا دینگے ہم ان کو
      اور ہر روز اپنا یہ وعدہ بھلا دیتے ہیں

      درد کا بوجھ اب دل پی کچھ زیادہ ہو جاتا ہے
      پھر چہرے پہ اپنے ہم مسکراہٹ سجا لیتے ہیں

      دل ہی کافی ہے تیری یاد میں جلنے کے لیئے
      شام ہوتے ہی چراغوں کو بجھا دیتے ہیں

      – سمیر

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s