Monthly Archives: July 2012

Woh Aik Khat (وہ ایک خط)

Standard

 

وہ ایک خط

جو تُو نے لکھا ہی نہیں

میں روز بیٹھ کے اس کا

جواب لکھتا ہوں ۔ ۔ ۔

—————————————————

Woh Aik Khat

Jo Tunay Likha Hi Nahi

Main Roz Baith Ke Uska

Jawab Likhta Hoon..!!!!

Advertisements

Tere Khwaab aur Main (تیرے خواب اور میں)

Standard

کھڑکی چاند کتاب اور میں

مدت سے ایک باب اور میں

 

موج اور کشتی ساحل پر

دریا میں گرداب اور میں

 

شام اداسی خاموشی

کچھ کنکر تالاب اور میں

ہر شب پکڑے جاتے ہیں

گہری نیند تیرے خواب اور میں

۔ ۔ ۔

khidki chaand kitaab aur main
mudat se aik baab aur main


mauj aur kashti saahil per
dariya main gardaab aur main


shaam udaasi khaamoshi
kuch kankar talaab aur main


har shab pakre jate hain
gehri neend tere khwaab aur main


 

نعت – تیرے ہوتے جنم لیا ہوتا

Standard





تیرے ہوتے جنم لیا ہوتا


سانس لیتا تُو اور میں جی اُٹھتا
کاش مکہ کی میں فضا ہوتا


ہجرتوں میں پڑاو ہوتا میں
اور تو کچھ دیر کو رکا ہوتا


تیرے حُجرے کے آس پاس کہیں
میں کوئی کچا راستہ ہوتا


بیِچ طائف وقت سنگ زنی
تیرے لب پہ سجی دعا ہوتا


کسی غزوہ میں زخمی ہو کر میں
تیرے قدموں میں جا گرا ہوتا


کاش اُحد میں شریک ہو سکتا میں
اور باقی نہ پھر بچا ہوتا


تیری کملی کا سُوت کیوں نہ ہوا
تیرے شانوں پہ جھولتا ہوتا


چوب ہوتا میں تیری چوکھٹ کی
یا تیرے ہاتھ کا عصا ہوتا


تیری پاکیزہ زندگی کا

کوئی گمنام واقعہ ہوتا


لفظ ہوتا میں کسی آیت
جو تیرے ہونٹ سے ادا ہوتا


میں کوئی جنگجُو عرب ہوتا
اور تیرے سامنے جھُکا ہوتا


میں بھی ہوتا تیرا غلام کوئی
لاکھ کہتا نہ میں رہا ہوتا


سوچتا ہو تب جنم لیا ہوتا


چاند ہوتا میں تیرے زمانے کا
پھر تیرے حکم سے بٹا ہوتا


پانی ہوتا اداس چشموں کا
تیرے قدموں میں بہہ گیا ہوتا


پودا ہوتا میں جلتے صحرا میں
اور تیرے ہاتھ سے لگا ہوتا


تیری صحبت مجھے مِلی ہوتی
میں بھی کتنا خوشنما ہوتا


مجھ پہ پڑتی جو تیری چشمِ کرم
آدمی کیا میں معجزہ ہوتا


ٹکرا ہوتا میں ایک بادل کا
اور تیرے ساتھ گھومتا ہوتا


آسمان ہوتا عہدِ نبوی کا
تجھ کو حیرت سے دیکھتا ہوتا


خاک ہوتا میں تیری گلیوں کی
اور تیرے پاؤں چومتا ہوتا


پیڑ ہوتا میں کھجور کا کوئی
جسکا پھل تُو نے کھایا ہوتا


بچہ ہوتا میں غریب بیوہ کا
سر تیری گود میں چھپا ہوتا


رستہ ہوتا تیرے گزرنے کا
اور تیرا رستہ دیکھتا ہوتا


بُت ہی ہوتا میں خانہ کعبہ میں
جو تیرے ہاتھ سے فنا ہوتا


مجھ کو خالق بناتا غار حَسَن
اور میرا نام بھی حِرَا ہوتا

[حَسَن نثار]

020416_0845_2.png

Tere hote janam liya hota

Koi mujh sa na duusra hota

Saans leta Tu aur main jee uthta
Kash Makkah ki main fizaa hota

Hijraton main parrao hota main
Aur Tu kuch dair ko ruka hota

Tere hujray ke aas paas kahin
Main koi kacha raasta hota

Beech taayef bawaqt sang-zani
Tere lab pe saji dua hota

Kisi ghazway main zakhmi ho ke main
Tere qadmon main aa gira hota

Kash ohad main shareek ho sakta
Aur baaqi na phir bacha hota

Teri pakeeza zindagi ka main
Koi gumnaam waqiya hota

Paani hota udaas chashmon ka
Tere qadmon pe behh geya hota

Poda hota main jalte sehraa main
Aur Tere hath se laga hota

Pairr hota khajoor ka main koi
Jiss ka phall Tu ne kha liya hota

Tukrra hota main aik baadal ka
Aur Tere sath ghoomta hota

Aasmaan hota main ehd-e-nabvi ka
Tujh ko hairat se dekhta hota

Bacha hota ghareeb bewa ka
Sar teri gaud main chupa hota

Rasta hota Tere guzarne ka
Aur tera rasta dekhta hota

Main koi jangjuu arab hota
Aur Tere saamne jhuka hota

But hi hota main Khana Kaaba main
Jo Tere hath se fanaa hota

Main bhi hota tera ghulaam hota
Lakh kehta na main rihaa hota

Mujh pe parrti jo teri nazr-e-karam
Aadmi kya mojzaa hota

Chobh hota main teri chokhat ki
Ya Tere hath ka aassaa hota

Khaak hota main teri galliyon ki
Aur Tere paaon choomta hota

Soot hota main teri chaadar ka
Aur Tere shaanon pe jhoolta hota

Mujh ko khaaliq banata ghaar hassan
Aur mera naam bhi hira hota

[Hassan Nisar]