Monthly Archives: July 2013

کل ہم نے سپنا دیکھا ہے- ابنِ انشاء ( Kal hum ne sapna dekha hai )

Standard

      
 


کل ہم نے سپنا دیکھا ہے

کل ہم نے سپنا دیکھا ہے

جو اپنا ہو نہیں سکتا ہے

اُس شخص کو اپنا دیکھا ہے

   
 

وہ شخص کہ جِس کی خاطر ہم

اِس دیس پِھریں، اُس دیس پِھریں

جوگی کا بنا کر بَھیس پِھریں

چاہت کے نِرالے گِیت لِکھیں

جی موہنے والے گِیت لِکھیں

دَھرتی کے مہکتے باغوں سے

کلیوں کی جھولی بَھر لائیں

اَمبر کے سجِیلے مَنڈل سے

تاروں کی ڈولی بَھر لائیں

   
 

ہاں کِس کے لیے، سب اُس کے لیے

وہ جِس کے لب پر ٹیسُو ہیں

وہ جس کے نیناں آہُو ہیں

جو خار بھی ہے اور خُوشبُو بھی

جو درد بھی ہے اور دارُو بھی

وہ اَلھّڑ سی، وہ چنچل سی

وہ شاعر سی، وہ پاگل سی

لوگ آپ ہی آپ سمجھ جائیں

ہم نام نہ اُس کا بتلائیں

   
 

اے دیکھنے والو! تُم نے بھی

اُس نار کی پِیت کی آنچوں میں

اِس دل کا تپنا دیکھا ہے ؟

کل ہم نے سپنا دیکھا ہے

اِبنِ اِنشاّ


 

Kal hum ne sapna dekha hai

Kal hum ne sapna dekha hai

Jo apna ho nahi sakta

Us shakhs ko apna dekha hai

   
 

Wo shakhs keh jis ki khatir hum

is des phirain , us des phirain

jogi ka bana kar bhaes phirain

chahat ke niralay geet likhain

ji mohnay walay geet likhain

dharti k mehekte baagho’n se

kaliyon ki jholi bhar layen

ambar ke sajeelay mandal se

taaro’n ki doli bhar layen

   
 

haan kis ke liye , sab us ke liye

wo jis ke lab par tesu hain

wo jis k naina aahu hain

jo khaar bhi hai aur khushbu bhi

jo dard bhi hai aur daaru bhi

wo alhar’ si , wo chanchal si

wo shayar si , wo pagal si

wo log aap hi aap samajh jayen

hum naam na us ka batlayen

   
 

Ae dekhne walay tum ne bhi

us naar ki peet ki aanchon main

is dil ka tapna dekha hai ?

kal hum ne sapna dekha hai

   
 

Ibn-e-Insha

Advertisements