Monthly Archives: September 2014

عکس کتنے اتر گئے مجھ میں

Standard

 


عکس کتنے اتر گئے مجھ میں
پھر نجانے کدھر گئے مجھ میں


یہ جو میں ہوں زرا سا باقی ہوں
وہ جو تم تھے وہ مر گئے مجھ میں


میرے اندر تھی ایسی تاریکی
آ کے آسیب ڈر گئے مجھ میں


میں نے چاہا تھا زخم بھر جایئں
زخم ہی زخم بھر گئے مجھ میں

پہلے اُترا میں دل کے دریا میں
پھر سمندر اُتر گئے مجھ میں

کیسا خاکہ بنا دیا مجھ کو
کون سا رنگ بھر گئے مجھ میں

میں وہ پل تھا جو کھا گیا صدیاں
سب زمانے گزر گئے مجھ میں

بن کے خورشید سامنے آئے
اور پھر رات کر گئے مجھ میں

 

 

(source)

Advertisements

Ae puttar hatta’n te nai wikday (اے پُتر ہٹاں تے نئیں وکدے)

Standard


 

اے پُتر ہٹاں تے نئیں وکدے ۔ ۔ ۔ ۔ تُو لبھنی ایں وچ بازار کُڑے ۔ ۔ ۔

اے دین اے میرے داتا دی ۔ ۔ ۔ ۔ نہ ایویں ٹکراں مار کڑے ۔ ۔ ۔

اے پُتر وِکاو ُ چیز نئیں ۔ ۔ ۔ ۔ مُل دے کے جھولی پائیے نی ۔ ۔ ۔

اے ایڈا سستا مال نئیں ۔ ۔ ۔ ۔ کی توں جاکے منگ لیائیے نِی ۔ ۔ ۔

اے سودا نقد وی نئیں ملدا ۔ ۔ ۔ ۔ تُو لبھدی پھریں ادھار کڑے ۔ ۔ ۔

اے پُتر ہٹاں تے نئیں وکدے ۔ ۔ ۔ ۔

اے شیر بہادر غازی نیں ۔ ۔ ۔ ۔ اے کسے کولوں وی ہردے نئیں ۔ ۔۔

انیاں دشمناں کولوں کی ڈرنا ۔۔ ۔ ۔ اے موت کولوں وِی ڈردے نئیں ۔ ۔ ۔

اے اپنے دیس دی عزت توں ۔ ۔ ۔ ۔ جان اپنی دیندے وار کڑے ۔ ۔ ۔

اے پُتر ہٹاں تے نئیں وکدے ۔ ۔ ۔ ۔

دھن بھاگ نیں اونہا ں ماواں دے ۔ ۔ ۔۔ جِنہاں ماواں دے لائے نیں ۔ ۔ ۔

دھن بھاگ نیں بھین بھراواں دے ۔ ۔ ۔ ۔ جِنہاں گودیا ں وِیر کھڈائے نیں ۔ ۔ ۔

مان نیں ماناں والئے دے ۔ ۔ ۔۔ نئیں ایس دی تینوں ساڑھ کڑے ۔ ۔ ۔

اے پُتر ہٹاں تے نئیں وکدے ۔ ۔ ۔ ۔

شاعر : صوفی تبسم

 

 

Note: The images are taken from web and respective designer’s websites/blogs. I do not mean to infringe the any copyright. If the owner has any issue then contact me and I will remove the images.

 

اب تو کچھ اور بھی اندھیرا ہے

Standard


اب تو کچھ اور بھی اندھیرا ہے

یہ میری رات کا سویرہ ہے

رہزنوں سے تو بھاگ نکلا تھا

اب مجھے رہبروں نے گھیرا ہے

آگے آگے چلو تبر والو

ابھی جنگل بہت گھنیرا ہے

قافلہ کس کی پیروی میں چلے

کون سب سے بڑا لٹیرا ہے؟

سرمہ آلود خشک آنسووں نے

نورِ جاں خاک پر بکھیرا ہے

راکھ راکھ استخواں سفید سفید

یہی منزل یہی بسیرا ہے

اے میری جاں اپنے جی کے سوا

کون تیرا ہے کون میرا ہے

سو رہو اب حفیظ جی تم بھی

یہ نئی زندگی کا ڈیرہ ہے

حفیظ جالندھری

 

نوٹ: میں کسی بھی سیاسی پارٹی کا حامی نہیں ہوں اور کسی بھی ‘سُوڈو انٹلکچول’ کا ‘تجزیہ’ کمنٹس میں قبول نہیں کروں گا۔ سب کے سب میرے سمیت اِس وطن کے خطاوار ہیں