Monthly Archives: August 2015

میں بھی تو بہت بدل گیا ہوں-جون ایلیا (Main bhi to bohat badal gaya hoon)

Standard


اے صبح! میں اب کہاں رہا ہوں

خوابوں ہی میں صرف ہو چکا ہوں

کیا ہے جو بدل گئی ہے دنیا

میں بھی تو بہت بدل گیا ہوں

میں جُرم کا اعتراف کر کے

کچھ اور ہے جو چُھپا گیا ہوں

میں اور فقط اسی کی تلاش

اخلاق میں جھوٹ بولتا ہوں

رویا ہوں تو اپنے دوستوں میں

پر تجھ سے تو ہنس کے ہی ملا ہوں

اے شخص! میں تیری جستجو میں

بےزار نہیں ہوں، تھک گیا ہوں

جون ایلیا


Ae subah ! ab ‘main’ kahan raha hoon

Khwabo’n hi main sarf ho chuka hoon

Kia hai jo badal gai hai duniya

Main bhi to bohat badal gaya hoon

Main jurm ka aitraaf kar ke

Kuch aur hai jo chupa gaya hoon

Main aur faqt usi ki talaash

Akhlaaq main jhoot bolta hoon

Roya hoon , to apnay dosto main

Tujh se to hans ke hi mila hoon

Ae shakhs ! main teri justuju main

Be-zaar nahi hoon , thak gaya hoon

Note: To best view this post please install this beautiful Urdu font: Alvi Nastaleeq.

Image is not mine, taken from internet.

Advertisements