Monthly Archives: February 2016

رات اس نے پوچھا تھا (Raat us ne poocha tha)

Standard

020713_1750_Issebehterb1.png

chandni-december-ki2

020416_0845_2.png

raat us ne poocha tha

tum ko kaisi lagti hai

chandni December ki ?

main ne kehna chaaha tha

saal o mah ke baray main

guftugu ke kia ma’ni ?

chahay koi manzar ho

dasht ho , samandar ho

June ho , December ho

dharkano ka har naghma

manzaro’n pe bhaari hai

saath jab tumhara ho

Dil koi k sahara ho

aisa lagta hai jaise

ik nasha sa taari hai

lekin us ki qurbat main

kuch nahi kaha maine

takti reh gai mujh ko

Advertisements

مجھے اپنے ضبط پہ ناز تھا (Mujhe apne zabt pe naaz tha)

Standard


مجھے اپنے ضبط پہ ناز تھا سرِ بزم رات یہ کیا ہوا


مری آنکھ کیسے چھلک گئی مجھے رنج ہے یہ برا ہوا

 


مری زندگی کے چراغ کا یہ مزاج کوئی نیا نہیں


ابھی روشنی ابھی تیرگی، نہ جلا ہوا نہ بجھا ہوا

 


مجھے جو بھی دشمنِ جاں ملا وہی پختہ کارِ جفا ملا


نہ کسی کی ضرب غلط پڑی، نہ کسی کا تیر خطا ہوا

 


مجھے آپ کیوں نہ سمجھ سکے کبھی اپنے دل سے بھی پوچھئے


مری داستانِ حیات کا تو ورق ورق ہے کھلا ہوا

 


جو نظر بچا کے گزر گئے مرے سامنے سے ابھی ابھی


یہ مرے ہی شہر کے لوگ تھے مرے گھر سے گھر ہے ملا ہوا

 


ہمیں اس کا کوئی بھی حق نہیں کہ شریکِ بزمِ خلوص ہوں


نہ ہمارے پاس نقاب ہے نہ کچھ آستیں میں چھپا ہوا

 


مرے ایک گوشہ فکر میں، میری زندگی سے عزیز تر


مرا ایک ایسا بھی دوست ہے جو کبھی ملا نہ جدا ہوا

 


مجھے ایک گلی میں پڑا ہوا کسی بدنصیب کا خط ملا


کہیں خونِ دل سے لکھا ہوا، کہیں آنسوؤں سے مٹاہوا

 


مجھے ہم سفر بھی ملا کوئی تو شکستہ حال مری طرح


کئی منزلوں کو تھکا ہوا، کہیں راستے میں لٹا ہوا

 


ہمیں اپنے گھر سے چلے ہوئے سرِ راہ عمر گزر گئی


کوئی جستجو کا صلہ ملا، نہ سفر کا حق ہی ادا ہوا

 

اقبال عظیم

 


 

Mujhe apne zabt pe naaz tha , sar e bazm raat ye kya hua

Meri aankh kaise chalak gayi , mujhe ranj hai ye bura hua

 

Meri zindagi ke charagh ka ye mizaaj koi naya nahi

Abhi roshni abhi teergi , na jala hua na bujha hua

 

Mujhe jo bhi dushman e jaan mila , wohi pukhta kaar e jafa mila

Na kisi ki zarb galat pari , na kisi ka teer khata hua

 

Mujhe aap kiun samajh na sake kabhi apne dil se bhi pochiye

Meri daastan e hayaat ka to warq warq hai khula hua

 

Jo nazar bacha k guzar gaye mere saamne se abhi abhi

Ye mere hi shehr k log thay mere ghar se ghar hai mila hua

 

Hamain is ka koi bhi haq nahi k shareeq e bazm e khuloos hon

Na hamare paas naqaab hai na kuch aasteen mai chupa hua

 

Mere ek gosha e fikr mai meri zindagi se azeez tar

Mera ek aisa bhi dost hai jo kabhi mila na juda hua

 

Mujhe ik gali mai para hua kisi badnaseeb ka khat mila

Kahin khoon e dil se likha hua kahin aansuon se mita hua

 

Mujhe hamsafar bhi mila koi to shikasta haal meri tarha

Koi manzilon ka thaka hua kahin raaste mai luta hua

 

Hamai apne ghar se chalay hue Sar e raah umr guzar gai

Koi justuju ka sila mila na safar ka haq hi ada hua

~ Iqbal Azeem