وہ عابی جو تھا !! گُزر گیا ہے

Standard

012410_0913_1.jpg


میں زندگی سے جُڑا ہوا ہوں

اِسی لیے تو !! مَرا ہوا ہوں

 

تُو کہکشاؤں کی سیر کرلے !!۔

مُجھے ہے سونا !! تھکا ہوا ہوں

 

میں دوستوں سے کٹا ہوا ہوں

جبھی تو اب تک !! بچا ہوا ہوں

 

تمھارے بس میں نہیں وہ قیمت !!۔

میں اِتنا مہنگا !! بِکا ہوا ہوں

 

کوئی بھی رستہ نیا نہیں ہے

ہر ایک رُخ پر !! چلا ہوا ہوں

 

کسی پہ کیسے بھروسہ کر لُوں !!۔

میں خود سے مِل کے !! ڈرا ہوا ہوں

 

رگوں میں کالا لہو رواں ہے !!۔

میں اِتنا !! اب تک !! ڈسا ہوا ہوں

 

وہ سامنے بھی کھڑا ہوں میں ہی !!۔

اِدھر بھی میں ہی !! پڑا ہوا ہوں

 

وہ عابی جو تھا !! گُزر گیا ہے

یہ عابی جو ہے !! بنا ہوا ہوں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عابی مکھنوی

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s