Category Archives: My Life,My Ramblings

Kaaba pe pari jab pehli nazar (کعبے پہ پڑی جب پہلی نظر)

Standard

2017-03-06 20.48.54

کعبے پہ پڑی جب پہلی نظر، کیا چیز ہے دنیا بھول گیا
یوں ہوش و خرد مفلوج ہوئے، دل ذوقِ تماشہ بھول گیا

پھر روح کو اذنِ رقص ملا، خوابیدہ جُنوں بیدار ہوا
تلؤوں کا تقاضا یاد رھا نظروں کا تقاضا بھول گیا

احساس کے پردے لہرائے، ایمان کی حرارت تیز ہوئی
سجدوں کی تڑپ اللہ اللہ، سر اپنا سودا بھول گیا

پہنچا جو حرم کی چوکھٹ تک، اک ابر کرم نے گھیر لیا
باقی نہ رہا پھر ہوش مجھے، کیا مانگا اور کیا کیا بھول گیا

جس وقت دعا کو ہاتھ اٹھے، یاد آ نا سکا جو سوچا تھا
اظہارِ عقیدت کی دُھن میں اظہارِ تمنا بھول گیا

ہر وقت برستی ہے رحمت کعبے میں جمیل ، اللہ اللہ
خاکی ہوں میں کتنا بھول گیا

عاصی ہوں میں کتنا بھول گیا

کعبے پہ پڑی جب پہلی نظر، کیا چیز ہے دنیا بھول گیا
یوں ہوش و خرد مفلوج ہوئے، دل ذوقِ تماشہ بھول گیا

020416_0845_2.png

اللہ عزوجل رب العزت  الرحمان الرحیم الکریم نے

مجھ حقیر فقیر خاکی و عاصی گنہگار پہ خاص کرم کیا اور مجھے اپنے ماں باپ اور بیوی بچہ سمیت اپنے گھرپر حاضری کا  شرف بخشا  اور اپنے حبیب صل اللہ علیہ وآلہ وسلم کے روضہ اطہر پہ بھی حاضری کا شرف بخشا

ساری زندگی ہر سانس کے ساتھ اللہ رب العزت کا شکر کروں تو ایک لمحے کا بھی حق ادا نہیں ہو سکتا ۔  جو کیفیت اور احساسات وہاں ہوتے ہیں اُنہیں صحیح معنی میں الفاظ کے محدود احاطے میں بیان کرنا نہ ممکن ہے ۔  مکہ مکرمہ میں بیت اللہ شریف  میں اللہ کا جلال اور عظمت رُو پزیر ہے ۔  اور مدینہ منورہ میں خاتم النبیین رحمت اللعالمین صل اللہ علیہ و آلہ وسلم کی رحمت ، محبت ، انوارات کے نور اور سکون کا سماں ہے ۔ بندہ وہاں جا کر ، بلکہ جب یہاں سے رختِ سفر ہی باندھتا ہے تو دنیا کی سوچیں ، پریشانیاں ، بکھیڑے ، مستقبل کی فکر   ، غرض ہر چیز سے بے فکر اور بے نیاز ہو جاتا ہے ۔  یہ بھی اللہ کا کرم اور فضل ہے ۔

اللہ مجھے  اور سب کو بار بار اپنے گھر بلائے اور اپنے حبیب ہمارے آقا سرکارِ عالم رحمت العالمین نبیِ رحمت حضرت محمد مصطفٰی صل اللہ علیہ و آلہ وسلم کے روضہ مبارک پہ حاضری کی توفیق عطا فرمائے آمین

کوشش کروں گا کے اپنے سفرِ حرم کے اور خیالات اور واقعات یہاں گوشگزار کروں

Transliteration in roman urdu:

Allah Azawajal Rab ul Izzat Al Rahman Ak Raheem Al Kareem ne

Mujh haqeer faqeer khaki o aassi gunehgaar pay khaas karam kya aur mujhe apne maa baap aur biwi bachay sameit Apne ghar par haazri ka sharf bakhsha aur Apne Habib SalAllah o Aleh Wa Aalehi Wasallam ke Roza At’her pay bhi haazri ka ssharf bakhsha

Saari zindagi har saans ke sath Allah Rab ul Izzat ka shukar karoon to aik lamhay ka bhi haq ada nahi ho sakta. jo kefiyat aur ehsasaat wahan hotay hain unhen sahih maienay mein alfaaz ke mehdood ihatay mein bayan karna na mumkin hai. Makkah  Mukaramah mein Bait Ullah Shareef mein Allah ka Jalaal aur Azmat roo pazeer hai, aur Madina Munawwara mein Khaatim ul Nabiyeen Rehmat ulilaalameen Salallah o Aleh Wa Aalehe Wa Sallam ki Rehmat, Mohabbat, Anwaraat ke Noor aur Sukoon ka samaa hai. Banda wahan ja kar, balkay jab yahan se rakhtِ e safar hi baandhta hai to duniya ki sochen, pareshaniya, bakherray, mustaqbil ki fikr, gharz har cheez se be-fikar aur be-niaz ho jata hai. yeh bhi Allah ka karam aur fazl hai .

Allah mujhe aur sab ko baar baar Apne ghar bulaye aur apne Habib hamaray Aaqa Sarkar e Aalam Rehmat Ulilaalameen Nabi e Rehmat Hazrat Muhammad Mustafa Salalallah o Alehe Wa Aalehe Wasallam ke Roza Mubarak pay haazri ki tofeeq ataa farmaye Ameen

Koshish karoon ga ke apne safrِ e haram ke aur khayalat aur waqeat yahan gosh-guzar karoon

بلا عنوان

Standard

گھر میں ابو جی  اور امی جی نے کچھ مرغیاں پال رکھی ہیں ۔ ایک مرغا اور ۳ تین مرغیاں  ہیں ۔ دیسی انڈوں کے علاوہ فائدے یہ ہیں کہ ایک تو ابو جی کو ایک مصروفیت مل گئی ہے اور چھوٹُو  کو جیتے جاگتے کھلونے ۔

آج صبح ناشتہ کرتے ہوئے ایک واقعہ ہوا ۔  بیگم بھی ساتھ بیٹھی ناشتہ کر رہی تھی ۔ مرغا مرغیاں دروازے  کے باہر تھے ۔ بیگم  اپنی ڈبل روٹی، بران بریڈ ،  سے چند چھوٹے  چھوٹے ٹکڑے دروازے کے پاس پھینک رہی تھی ۔ مرغا اندر آتا تھا اور وہ ٹکڑا منہ میں اٹھا کر کسی نہ کسی مرغی کے سامنے رکھتا تھا کہ وہ کھا لے  ۔ اور مرغی وہ ٹکڑا کھا لیتی تھی ۔ اسی طرح شروع کے ۴-۵ ٹکڑے اُس نے مرغیوں کو کھلائے  پھر کہیں ایک دانہ خود کھایا

میں یہ سب دیکھ رہا تھا اور ساتھ والے کمرے سے ابو اور امی کے چھوٹوُ کے ساتھ کھیلنے کی آوازیں آ رہی تھیں  اور میرے چہرے پہ بس ایک ہلکی سی مسکراہٹ ، دماغ میں یادیں اوردل میں تشکر تھا

رات اس نے پوچھا تھا (Raat us ne poocha tha)

Standard

020713_1750_Issebehterb1.png

chandni-december-ki2

020416_0845_2.png

raat us ne poocha tha

tum ko kaisi lagti hai

chandni December ki ?

main ne kehna chaaha tha

saal o mah ke baray main

guftugu ke kia ma’ni ?

chahay koi manzar ho

dasht ho , samandar ho

June ho , December ho

dharkano ka har naghma

manzaro’n pe bhaari hai

saath jab tumhara ho

Dil koi k sahara ho

aisa lagta hai jaise

ik nasha sa taari hai

lekin us ki qurbat main

kuch nahi kaha maine

takti reh gai mujh ko

Yaadain ….

Standard

………………. I kept staring at this pic for so long …. It has invoked so many memories that I’m still swimming in them … and I think I will be like this for many more minutes …and yes the fan fight was real .. and me being the eldest exploited the authority to the fullest 🙂 

… wo bhi kia din thay … zindagi kitni saada aur pursukoon thi …. wo charpaia’n aur bistray bichana .. aur apni charpai pe kisi aur ko na letnay dena ta ke jab khud leto to bister thanda thanda ho 🙂

… garmion main khulay asmaaan talay sonay ka jo maza hai wo bass wohi jaanta hai jo soya ho …. un dino ye mobile shobile aam nhi tha .. na late night call packages na sms bundles ka jhanjat na mobile games ka alam ghalam …   raat chand ko taktay,  aur sitaaron ko gintay gintay aur hazaron idher udher ki sochain sochtay so jatay thay …. toot’tay taray bhi gintay thay ….

aur subhai’n itni noorani hoti thi … taaza saaf hawa main lambi lambi saansain lete thay …. aisa maza aata tha ke bayan nhi ho sakta …. murgho’n ki azaanai’n …aur chirrio’n ki cheh ch’hahat … suraj tulu’u honay ke waqt aasman ka jo rang hota tha  … ahhhh .. wo to bhool bhi gaya ab

… ab to raat ko sheher ki masnui roshni ki chaka chond ki wajah se sitaray bhi nazar nhi aatay …. Air Conditioned band rooms main recycled filtered thandi hawa main sansain lete hain … 10 bajay k baad uthtay hain aur sab se pehle side table pe moble check kartay hain .. aur raat ko .. haha .. kabhi yaadain satayen to aisi post likh kar so jatay hain aur aglay din wohi machinee zindagi ki dorr main lag jatay hain … fitay munh !

میری جان پاکستان

Standard

میرے پیارے وطن پاکستان کو سالگرہ مبارک ہو


پاکستان صرف ایک زمین کا ٹکڑا نہیں ، یہ میرا سب کچھ ہے ، میرا بچپن ،

میری جوانی ، میری خوشیاں ، میرے پیارے ، میرے دوست اور ان سب سے

متعلق میری یادیں سب اس سے جڑی ہوئی ہیں ۔ یہ میری پہچان ہے میرا فخر ہے

یہ میری جان ہے

 

محبت ہے مجھے اپنے وطن سے، اس کی ثقافت سے ، اسلامی اقدار سے

گلیوں سے چوباروں سے ، ندیوں سے ، پہاڑوں سے، جھیلوں سے آبشاروں سے

مسجدوں سے میناروں سے ، موسموں سے ، فضاوں سے ، ہواُوَں سے

ہر چیز سے ۔ ۔ ۔

 

وطن سے محبت ایمان کا حصہ ہے ۔ مجھے افسوس ہوتا ہے اور ترس آتا ہے

ان لوگوں پر جو پاکستانی ہوتے ہوئے پاکستان کو برا بھلا کہتے ہیں ۔ آج اگر

حالات خراب ہیں تو یہ اور کسی کا نہیں بلکہ صرف ہمارا قصور ہے ۔ یہ ملک

دین اسلام کے نام پہ ہمیں اللہ عزوجل نے عطا کیا تھا ۔ اور آج یہ سب عذاب ہم

پر مسلط ہیں ظالم حکمران، مہنگائی، بجلی، گیس، پانی کی قلت کی صورت میں

کیوں کہ ہم نے اس کی قدر نہ کی ۔ ناشکری کی ، اللہ کی نافرمانی کی ۔ ۔ ۔ یہ سب

ہمارے برے اعمال اور اجتماٰعی گناہوں کا نتیجہ ہے۔

 

لیکن میں مایوس نہیں کہ اگر ہم سب بحیثیت قوم اللہ سے اپنے گناہوں کی معافی مانگیں

اور اللہ کے حضور توبہ کریں اور اپنے انفرادی فائدہ کی بجائے اس پاک سرزمین کے

فائدے کہ لیئے جدوجہد کریں اور خود بھی اس کو نقصان نہ پہنچائیں اور دوسروں کو

بھی روکیں ، تو انشااللہ ہمارا پیارا ملک پھر سے خوشحالی، امن، سلامتی کا گہوارہ بن جائے گا

 

زرا نم ہو تو یہ مٹی بڑی زرخیز ہے ساقی

 

موج بڑھے یا آندھی آئے ، دیا جلائے رکھنا ہے

گھر کی خاطر سو دُکھ جھیلیں ، گھر تو آخر اپنا ہے

 


خدا کرے میری ارض پاک پر اترے
وہ فصلِ گل جسے اندیشہء زوال نہ ہو

یہاں جو پھول کھلے وہ کِھلا رہے برسوں
یہاں خزاں کو گزرنے کی بھی مجال نہ ہو

یہاں جو سبزہ اُگے وہ ہمیشہ سبز رہے
اور ایسا سبز کہ جس کی کوئی مثال نہ ہو

گھنی گھٹائیں یہاں ایسی بارشیں برسائیں
کہ پتھروں کو بھی روئیدگی محال نہ ہو

خدا کرے نہ کبھی خم سرِ وقارِ وطن
اور اس کے حسن کو تشویش ماہ و سال نہ ہو

ہر ایک خود ہو تہذیب و فن کا اوجِ کمال
کوئی ملول نہ ہو کوئی خستہ حال نہ ہو

خدا کرے کہ میرے اک بھی ہم وطن کے لیے
حیات جرم نہ ہو زندگی وبال نہ ہو

(احمد ندیم قاسمی )


Khuda Karay Ke Meri Arz-e-Pak Per Utray
Wo Fasl-e-Gul Jisay Andesha-e-Zawaal Na Ho

Yahan Jo Phool Khilay, Khila Rahay Sadi’on
Yahan Khizaan Ko Guzarnay Ki Bhi Majaal Na Ho

Yahan Jo Sabza Ugay, Hamesha Sabz Rahay
Aur Aisa Sabz Ke Jis Ki Koi Misaal Na Ho

Khuda Karay Ke Na Kham Ho Sir-e-Waqar-e-Watan
Aur Is Ke Husn Ko Tashweesh-e-Mah-o-Saal Na Ho

Her Aik Fard Ho, Tahzeeb-o-Fun Ka Oaj-e-Kamaal
Koi Malool Na Ho, Koi Khasta Haal Na Ho

Khuda Karay Ke Meray Aik Bhi Hum’Watan Ke Leay
Hayaat Jurm Na Ho, Zindagi Wabaal Na Ho

Khuda Karay Ke Meri Arz-e-Pak Per Utray
Wo Fasl-e-Gul Jisay Andesha-e-Zawaal Na Ho