Category Archives: Poetry

Us zakhm e jaan ke naam – Aitbar Sajid (اُس زخمِ جاں کے نام)

Standard

pen

us zakhm e jaan ke naam - aitbar sajid

020416_0845_2.png

Us zakhm-e-jaan k naam, jo ab tak nahi bhara

Us zinda dil k naam, jo ab tak nahi mara

 

Un ehl-e-dil k naam, jo raahon ki dhool hain

Un hoslon k naam, jinhe dukh qabool hain

 

Us zindagi k naam, guzaara nahi jise

Us qarz-e-fann k naam, utara nahi jise

 

Un doston k naam, jo gosha nasheen hain

Un be-hisson k naam, jo baar-e-zameen hain

 

Un be dilon k naam, jo har dam malool hain

Un be bason k naam, jo gamlon k phool hain

 

Us shola rukh k naam, k roshan hai jis se raat

Hai zoofishaan andhere main, har nuqta-e-kitaab

 

Aur husn-e-bakamaal ki, ra’naiyon k naam

Aur apne zehen-o-qalb ki, tanhaiyon k naam

~ Aitbar Sajid ~

Advertisements

Koi ban gaya ronaq pakhiya’n di – Baba Fareed(کوئی بن گیا رونق پکھیاں دی – بابا فرید)

Standard

koi ban gaya ronaq pakhaya di.JPG

020416_0845_2.png

koi ban gaya ronaq pakhiya’n di

koi chorr ke sheesh mahal chaleya

koi paleya naaz te nakhraya’n vich

koi raet garam tay thal chaleya

koi bhul gaya maqsad aavan da

koi kar ke maqsad hal chaleya

aethay har koi ‘fareed’ musafir ae

koi aj chaleya koi kal chaleya

Main jis tarah ke bhi khwaab likhun – Mohsin Naqvi (میں جس طرح کے بھی خواب لکھوں – محسن نقوی)

Standard

AquaSixio-Digital-Art-57be93b1d104b__880.jpg

میں آڑھے ترچھے خیال سوچوں

کہ بے ارادہ ۔ ۔ ۔ کتاب لکھوں؟

کوئی ۔ ۔ ۔ شناسا غزل تراشوں

کہ اجنبی ۔ ۔ ۔ انتساب لکھوں ؟

گنوا دوں اک عمر کے زمانے ۔ ۔ ۔

کہ ایک پل کے ۔ ۔ ۔ حساب لکھوں

میری طبیعت پر منحصر ہے

میں جس طرح کا ۔ ۔ ۔ نصاب لکھوں

یہ میرے اپنے مزاج پر ہے

عذاب ۔ ۔ ۔ سوچوں، ثواب ۔ ۔ ۔ لکھوں

 

طویل تر ہے سفر تمہیں کیا؟

میں جی رہا ہوں مگر ۔ ۔ ۔ تمہیں کیا؟

 

مگر تمہیں کیا کہ تم تو کب سے

میرے ۔ ۔ ۔ ارادے گنوا چکے ھو

جلا کے ۔ ۔ ۔ سارے حروف اپنے

میری ۔ ۔ ۔ دعائیں بجھا چکے ھو

میں رات اوڑھوں ۔ ۔ ۔ کہ صبح پہنوں ؟

تم اپنی رسمیں ۔ ۔ ۔ اٹھا چکے ھو

سنا ہے ۔ ۔ ۔ سب کچھ ۔ ۔ ۔ بھلا چکے ھو

 

تو  اب میرے دل پہ ۔ ۔ ۔ جبر کیسا؟

یہ دل تو حد سے گزر چکا ہے

خزاں کا موسم ۔ ۔ ۔ ٹھہر چکا ہے

ٹھہر ۔ ۔ ۔ چکا ہے مگر تمہیں کیا؟

گزر ۔ ۔ ۔ چکا ہے مگر تمہیں کیا؟

 

مگر تمہیں کیا ۔ ۔ ۔ کہ اس خزاں میں

میں جس طرح کے ۔ ۔ ۔ بھی خواب لکھوں

~ محسن نقوی ~

020416_0845_2.png

main aarhay tirchey khayal sochun

ke be-irada … kitaab likhun

koi shanasa … ghazal tarashun

ke ajnabi … antisaab likhun

ganwa’dun ik umr ke zamane …

ke har ik pal ke … hisaab likhun

meri tabiyat pe munhisar hai

main jis tarah ka … nisaab likhun

ye mere apne mizaaj par hai

azaab … sochon , sawaab … likhun

 

taweel tar hai safar, tumhe kya ?

main jee raha hon magar … tumhe kya ?

 

magar tumhe kya ke tum to kab se

mere … iradey ganwa chuke ho

jala ke … saare haroof apne

meri … duaen bhuja chuke ho,

main raat orhon … ke subah pehno’n

tum apni rasmein … utha chuke ho

suna hai … sab kuch … bhula chuke ho

 

to ab mere dil pe … jabar kesa?

ye dil to hadd se guzar chuka hai

khizaan ka mausam … thehar chuka hai

thehar chuka hai magar tumhe kya?

 

magar tumhe kya … ke iss khizaan me

main jis trah ke … bhi khwaab likhun

~ Mohsin Naqvi ~

Image : https://aquasixio.deviantart.com/
Note: To best view this post please install these beautiful Urdu fonts: Alvi Nastaleeq / Jameel Noori (kasheeda) and other fonts from thispublic shared Urdu Fonts folder

Zakhm phoolo’n ki tarah mehkain gay par dekhe ga kon? (زخم پھولوں کی طرح مہکیں گے پر دیکھے گا کون)

Standard


اب کے رُت بدلی تو خوشبو کا سفر دیکھے گا کون

زخم پھولوں کی طرح مہکیں گے پر دیکھے گا کون

دیکھنا سب رقصِ بسمل میں مگن ہو جائیں گے

جس طرف سے تیر آئے گا ادھر دیکھے گا کون

زخم جتنے بھی تھے سب منسوب قاتل سے ہوئے

تیرے ہاتھوں کے نشاں اے چارہ گر دیکھے گا کون

وہ ہوس ہو یا وفا ہو بات محرومی کی ہے

لوگ تو پھل پھول دیکھیں گے شجر دیکھے گا کون

میری آوازوں کے سائے میرے بام ودر پہ ہیں

میرے لفظوں میں اُتر کر میرا گھر دیکھے گا کون

ہر کوئی اپنی ہوا میں مست پھرتا ہے فرازؔ

شہر نا پرساں میں تیری چشمِ تر دیکھے گا کون