Tag Archives: Faiz

اِس وقت تو یُوں لگتا هے ۔ فیض احمد فیض (Is Waqt To Yun Lagta Hai)

Standard

 

 

فیض کا کمال ہی یہی ھے کہ ان کی نظم کا آغاز چاہے کتنا دُکھی یا نا اُمیدی سے بھرا ہو ,

وہی نظم ایک اُمید دلاتے ہوئے اور ہمیشہ ایک مثبت اور خوش آین امید پہ ختم ہوتی ہے

 

“اِس وقت تو یُوں لگتا هے”

 

اس وقت تو یوں لگتا هے

اب کچھ بھی نہیں هے

مہتاب نہ سورج

نہ اندھیرا نہ سویرا

 

آنکھوں کے دریچوں پہ

کسی حسن کی چلمن

اور دل کی پناهوں میں

کسی درد کا ڈیرا

 

ممکن هے کوئی وہم تھا

ممکن هے سنا هو

گلیوں میں کسی چاپ کا

اک آخری پھیرا

 

شاخوں میں خیالوں کے

گھنے پیڑ کی شاید

اب آ کے کرے گا

نہ کوئی خواب بسیرا

 

اک بَیر، نہ اک مہر

نہ اک ربط نہ رشتہ

تیرا کوئی اپنا

نہ پرایا ، کوئی میرا

 

مانا کہ یہ سنسان گھڑی

سخت کڑی هے

 

لیکن مرے دل !!

یہ تو فقط اک هی گھڑی هے

 

همت کرو جینے کو تو

اک عمر پڑی هے

 

“فیض احمد فیض”

میو هسپتال، لاہور

، مارچ 82ء

 

ذریعہ

Advertisements

Gar mujhe yaqeen ho mere humdum mere dost – Faiz (گر مجھے اس کا یقیں ہومرے ہمدم مرے دوست)

Standard


گر مجھے اس کا یقیں ہو

مرے ہمدم مرے دوست

گر مجھے اس کا یقیں ہو

کہ ترے دل کی تھکن

تری آنکھوں کی اداسی، ترے سینے کی جلن

مری دلجوئی، مرے پیار سے مٹ جائے گی

گر مرا حرفِ تسلی وہ دوا ہو جس سے

جی اٹھے پھر ترا اجھڑا ہوا بے نور دماغ

تری پیشانی سے دھل جائیں یہ تذلیل کے داغ

تری بیمار جوانی کو شفا ہو جائے

گر مجھے اس کا یقیں ہو مرے ہمدم مرے دوست

روز و شب، شام و سحر میں تجھے بہلاتا رہوں

میں تجھے گیت سناتا رہوں

ہلکے شیریں

آبشاروں کے، بہاروں کے، چمن زاروں کے گیت

آمدِ صبح کے، مہتاب کے، سیاروں کے گیت

تجھ سے میں حسن و محبت کی حکایات کہوں

کیسے مغرور حسیناوں کے برفاب سے جسم

گرم ہاتھوں کی حرارت سے پگھل جاتے ہیں

کیسے اک چہرے کے ٹھہرے ہوئے مانوس نقوش

دیکھتے دیکھتے یک لخت بدل جاتے ہیں

کس طرح عارضِ محبوب کا شفاف بلور

یک بیک بادہ احمر سے دہک جاتا ہے

کیسے گلچیں کے لئے جھکتی ہے خود شاخِ گلاں

کس طرح رات کا ایوان مہک جاتا ہے

یونہی گاتا رہوں، گاتا رہوں تری خاطر

گیت بنتا رہوں، بیٹھا رہوں تری خاطر

پر مرے گیت ترے دکھ کا مداوا ہی نہیں

نغمہ جراح نہیں، مونس و غم خوار سہی

گیت نشتر تو نہیں، مرہمِ آزار سہی

ترے آزار کا چارہ نہیں نشتر کے سوا

اور یہ سفاک مسیحہ مرے قبضے میں نہیں

اس جہاں کے کسی ذی روح کے قبضے میں نہیں

ہاں مگر ترے سوا ۔ ۔ ۔ ۔

ترے سوا ۔۔۔۔

ترے سوا ۔۔۔

فیض احمد فیض

Jo Chalay To Jaan Se Guzar Gaye (جو چلے تو جاں سے گزر گئے)

Standard



 

Na ganwa’o navak-e-neemkash, dil-e-reza reza ganwa diya

jo bache hein sang sameit lo, tan-e-daagh daagh lutaa diya

 

mere chaaragar ko naveed ho, saf-e-dushmana ko khabar karo

woh jo qarz rakhtay thay jaan par wo hisaab aaj chuka diya

 

karo kaj jabeen pe sar-e-kafan, mere qaatilon ko gumaan na ho

ke ghuroor-e-ishq ka baankpan, pas-e-marg hum ne bhula diya

 

udher ek harf ki kushtni, yahan laakh uzr tha guftni

jo kaha to sun ke urda diya, jo likha to parh ke mita diya

 

jo rukay to koh-e-garan thay hum, jo chalay to jan se guzar gaye

raah-e-yaar hum ne qadam qadam, tujhe yaadgaar bana diya

 

~Faiz Ahmad Faiz~

 

Image src : Maria Yousaf Photography