Tag Archives: ibn e insha

Dil ishq main be-payan – Ibn e Insha (دل عشق میں بےپایاں)

Standard


دل عشق میں بے پایاں، سودا ہو تو ایسا ہو

دریا ہو تو ایسا ہو، صحرا ہو تو ایسا ہو

 

اک خال سویدا میں، پہنائی دو عالم

پھیلا ہو تو ایسا ہو، سمٹا ہو تو ایسا ہو

 

اے قیس جنوں پیشہ، انشا کو کبھی دیکھا؟

وحشی ہو تو ایسا ہو، رسوا ہو تو ایسا ہو

 

دریا بہ حباب اندر، طوفاں بہ سحاب اندر

محشر بہ حجاب اندر، ہونا ہو تو ایسا ہو

 

ہم سے نہیں رشتہ بھی، ہم سے نہیں ملتا بھی

ہے پاس وہ بیٹھا بھی، دھوکا ہو تو ایسا ہو

 

وہ بھی رہا بیگانہ، ہم نے بھی نہ پہچانا

ہاں اے دل دیوانہ، اپنا ہو تو ایسا ہو

 

اس درد میں کیا کیا ہے، رسوائی بھی لذت بھی

کانٹا ہو تو ایسا ہو، چبھتا ہو تو ایسا ہو

 

ہم نے یہی مانگا تھا، اس نے یہی بخشا ہے

بندہ ہو تو ایسا ہو، داتا ہو تو ایسا ہو

ابن انشاء


Dil ishq mein be-payan, soda ho to aisa ho

Daraya ho to aesa ho, sehra ho to aisa ho

 

Ik khaal sawaida main, pehnai do aalam

Phela ho to aisa ho , simta ho to aisa ho

 

Aey qais e junoon paisha, ~Insha ko kabhi dekha ?

Wehshi ho to aesa ho, ruswa ho to aisa ho

 

Daraya ba habaab ander, toofa’n ba sahaab ander

Mehshar ba-hajaab ander, hona ho to aisa ho

 

Ham say nahi rishta bhi, ham say nahi milta bhi

Hai paas woh betha bhi, dhoka ho to aisa ho

 

woh bhi raha baygana, ham nay bhi na pehchana

Haan ae Dil diwana, apna ho to aisa ho

 

Is dard mein kia kia hay, ruswaai bhi lazzat bhi

Kaanta ho to aesa ho, chubhta ho to aisa ho

 

Ham nay yehi maanga tha, us nay yehi bakhsha hay

banda ho to aesa ho, data ho to aisa ho

~ Ibn e Insha ~

 

Note: To best view this post please install this beautiful font: Jameel Noori Kasheeda 2.0 Font

Advertisements

کل ہم نے سپنا دیکھا ہے- ابنِ انشاء ( Kal hum ne sapna dekha hai )

Standard

      
 


کل ہم نے سپنا دیکھا ہے

کل ہم نے سپنا دیکھا ہے

جو اپنا ہو نہیں سکتا ہے

اُس شخص کو اپنا دیکھا ہے

   
 

وہ شخص کہ جِس کی خاطر ہم

اِس دیس پِھریں، اُس دیس پِھریں

جوگی کا بنا کر بَھیس پِھریں

چاہت کے نِرالے گِیت لِکھیں

جی موہنے والے گِیت لِکھیں

دَھرتی کے مہکتے باغوں سے

کلیوں کی جھولی بَھر لائیں

اَمبر کے سجِیلے مَنڈل سے

تاروں کی ڈولی بَھر لائیں

   
 

ہاں کِس کے لیے، سب اُس کے لیے

وہ جِس کے لب پر ٹیسُو ہیں

وہ جس کے نیناں آہُو ہیں

جو خار بھی ہے اور خُوشبُو بھی

جو درد بھی ہے اور دارُو بھی

وہ اَلھّڑ سی، وہ چنچل سی

وہ شاعر سی، وہ پاگل سی

لوگ آپ ہی آپ سمجھ جائیں

ہم نام نہ اُس کا بتلائیں

   
 

اے دیکھنے والو! تُم نے بھی

اُس نار کی پِیت کی آنچوں میں

اِس دل کا تپنا دیکھا ہے ؟

کل ہم نے سپنا دیکھا ہے

اِبنِ اِنشاّ


 

Kal hum ne sapna dekha hai

Kal hum ne sapna dekha hai

Jo apna ho nahi sakta

Us shakhs ko apna dekha hai

   
 

Wo shakhs keh jis ki khatir hum

is des phirain , us des phirain

jogi ka bana kar bhaes phirain

chahat ke niralay geet likhain

ji mohnay walay geet likhain

dharti k mehekte baagho’n se

kaliyon ki jholi bhar layen

ambar ke sajeelay mandal se

taaro’n ki doli bhar layen

   
 

haan kis ke liye , sab us ke liye

wo jis ke lab par tesu hain

wo jis k naina aahu hain

jo khaar bhi hai aur khushbu bhi

jo dard bhi hai aur daaru bhi

wo alhar’ si , wo chanchal si

wo shayar si , wo pagal si

wo log aap hi aap samajh jayen

hum naam na us ka batlayen

   
 

Ae dekhne walay tum ne bhi

us naar ki peet ki aanchon main

is dil ka tapna dekha hai ?

kal hum ne sapna dekha hai

   
 

Ibn-e-Insha

اس شام وہ رخصت کا سماں یاد رہے گا

Standard


اس شام وہ رخصت کا سماں یاد رہے گا

وہ شہر، وہ کوچہ، وہ مکاں، یاد رہے گا

 

وہ ٹیس کہ ابھری تھی ادھر یاد رہے گی

وہ درد کہ اٹھا تھا یہاں یاد رہے گا

 

ہم شوق کے شعلے کی لپک بھول بھی جائیں

وہ شمع فسردہ کا دھواں یاد رہے گا

 

کچھ میر کے ابیات تھے کچھ فیض کے نسخے

اک درد کا تھا جن میں بیاں یاد رہے گا

 

جاں بخش سی اُس برگِ گُل تر کی تراوت

وہ لمس عزیزِ دو جہاں یاد رہے گا

 

ہم بھول سکے ہیں نہ تجھے بھول سکیں گے

تُو، یاد رہے گا، ہاں ہمیں یاد رہے گا

 

ابن انشا

 

NOTE: the urdu font used is Al Qalam Nastaleeq , can be downloaded here

101st Post – Insha Naam ka Deewana

Standard

I originally thought of posting it as the 100th post but then I came across this awesome piece of poetry and the 100th post position was won over by it 🙂

First of all I wanted to share this  gem from Ibn e Insha’s poetry  which is recited to perfection by Asim Bashir. It’s a must listen. It’s a bit long, for the poetry lovers, totally worth it ! 🙂



You can find its transcript here.

And finally I wana share my Google Reader list of the blogs I have subscribed to. Each is special and awesome in its own … enjoy 🙂

Aasiyah Rising.Ali’s Journal

Andeel Usman(Chotay Pa Ji)

Amar bail

Expressions Afloat…

امبانس is آوسمنس

Gossips © Burhan Rasool

Anum’s Diary

bessy who?

My Life or Something Like it

Writing For Life

From the Archives of Chambers of Love

Capture Universe » Lesson of Life!

Beyond The Horizon..

C it my way!

Mudassir Shabbir

Vageha’s Blog

Anonymous Thought’s

Bewildered Soliloquy

Ch0c0’s w0rld

Cheesey Delight

Complicated

DaSh of sPice …

Rida – M0! unique thoughtsGold-Dust

H’s Guide to Growing Up…slowly

I Love You For All Eternity…

Idle Curiosities » Blissfull M

Imlee.pk

Intikhaab

Kazim’s Blog

Kulsaazistan

Life or Something Like It

Maniac Muslim

Mehreen Kasana

Meri Zaat Zarra-e-BenishaaN

MIM

Mind and Beyond

Mocking a Tale

Naqshab Afra

nEEbz Blog

when silence is everything

xegrtyjsofcbqla

Confessions of a Bonafide Adult

Conversation.with.myself

Crimson Sky

Critical Velocity

ابوشامل 

بلوبلا

حالِ دل

حالِ دل

خاموش آواز

لفنگے کی ڈائری

پانچواں درویش

پھپھے کٹني

ڈفرستان

Bholay Badshah ***** بھولے بادشاہ

Rida’s Diary

ROOFExpress

Sunrays

Tehreer

The GW Life

The Hidden Alcove

The Jacaranda Secret

the LOL class

Truly,Madly,Deeply

Ulta Seedha

Under The Magic Tree

فرض کرو

Standard

فرض کرو ہم اہل وفا ہوں ، فرض کرو دیوانے ہوں

فرض کرو یہ دونوں باتیں جھوٹی ہوں افسانے ہوں

 
 

فرض کرو یہ جی کی بپتا ، جی سے جوڑ سنائی ہو

فرض کرو ابھی اور ہو اتنی ، آدھی ہم نے چھپائی ہو

 
 

فرض کرو تمہیں‌خوش کرنے کے ڈھونڈے ہم نے بہانے ہوں

فرض کرو یہ نین تمہارے سچ مچ کے میخانے ہوں

 
 

فرض کرو یہ روگ ہو جھوٹا ، جھوٹی پیت ہماری ہو

فرض کرو اس پیت کے روگ میں‌سانس بھی ہم پر بھاری ہو

 
 

فرض کرو یہ جوگ بجوگ ہم نے ڈھونگ کچایا ہو

فرض کرو بس یہی حقیقت باقی سب کچھ مایا ہو

[ابنِ انشاً]