Tag Archives: ishq

Dil ishq main be-payan – Ibn e Insha (دل عشق میں بےپایاں)

Standard


دل عشق میں بے پایاں، سودا ہو تو ایسا ہو

دریا ہو تو ایسا ہو، صحرا ہو تو ایسا ہو

 

اک خال سویدا میں، پہنائی دو عالم

پھیلا ہو تو ایسا ہو، سمٹا ہو تو ایسا ہو

 

اے قیس جنوں پیشہ، انشا کو کبھی دیکھا؟

وحشی ہو تو ایسا ہو، رسوا ہو تو ایسا ہو

 

دریا بہ حباب اندر، طوفاں بہ سحاب اندر

محشر بہ حجاب اندر، ہونا ہو تو ایسا ہو

 

ہم سے نہیں رشتہ بھی، ہم سے نہیں ملتا بھی

ہے پاس وہ بیٹھا بھی، دھوکا ہو تو ایسا ہو

 

وہ بھی رہا بیگانہ، ہم نے بھی نہ پہچانا

ہاں اے دل دیوانہ، اپنا ہو تو ایسا ہو

 

اس درد میں کیا کیا ہے، رسوائی بھی لذت بھی

کانٹا ہو تو ایسا ہو، چبھتا ہو تو ایسا ہو

 

ہم نے یہی مانگا تھا، اس نے یہی بخشا ہے

بندہ ہو تو ایسا ہو، داتا ہو تو ایسا ہو

ابن انشاء


Dil ishq mein be-payan, soda ho to aisa ho

Daraya ho to aesa ho, sehra ho to aisa ho

 

Ik khaal sawaida main, pehnai do aalam

Phela ho to aisa ho , simta ho to aisa ho

 

Aey qais e junoon paisha, ~Insha ko kabhi dekha ?

Wehshi ho to aesa ho, ruswa ho to aisa ho

 

Daraya ba habaab ander, toofa’n ba sahaab ander

Mehshar ba-hajaab ander, hona ho to aisa ho

 

Ham say nahi rishta bhi, ham say nahi milta bhi

Hai paas woh betha bhi, dhoka ho to aisa ho

 

woh bhi raha baygana, ham nay bhi na pehchana

Haan ae Dil diwana, apna ho to aisa ho

 

Is dard mein kia kia hay, ruswaai bhi lazzat bhi

Kaanta ho to aesa ho, chubhta ho to aisa ho

 

Ham nay yehi maanga tha, us nay yehi bakhsha hay

banda ho to aesa ho, data ho to aisa ho

~ Ibn e Insha ~

 

Note: To best view this post please install this beautiful font: Jameel Noori Kasheeda 2.0 Font

Ishq irfaa’n ki ibtida hai (عشق عرفاں کی ابتدا ہے)

Standard


عشق عرفاں کی ابتدا ہے

حسن منزل نہیں راستہ ہے

 

ذرے ذرے میں سورج ہے پنہاں

تُو افق میں کسے ڈھونڈتا ہے

 

پھول کی زندگی ایک دن کی

نہ جانے کس بات پر پھولتا ہے

 

جب سے تم مہرباں ہو گئے ہو

دل کو دھڑکا سا اک لگ گیا ہے

 

علم و حکمت نے وہ گل کھلائے

اب تو وحشت ہی کا آسرا ہے

 

درد جو مل گیا ہے دوا سے

اس نئے درد کی کیا دوا ہے

 

کل یہی راستہ بن نہ جائے

آج جو صرف اک نقش پا ہے

ابن صفی


 

ishq irfaa’n ki ibtida hai

husn manzil nahi raasta hai

 

zarray zarray main suraj hai pinhaa’n

tu ufaq main kisay dhoondta hai ?

 

phool ki zindagi aik din ki

na jane kis baat pe phoolta hai

 

jab se tum mehrbaa’n ho gaye ho

dil ko dharka sa ik lag gaya hai

 

ilm o hikmat ne woh gul khilaye

ab to wehshat ka hi aasra hai

 

dard jo mil gaya hai dwa se

is naye dard ki kia dwa hai ?

 

kal yehi rasta ban na jaye

aaj jo sirf ik naqsh-e-pa hai !

 

(ibn e safi)

Ishq-e-Lahaasil (عشقِ لاحاصل)

Standard

سائڈ ٹیبل پہ چائے کا کپ ۔ ۔

ہاتھ میں عشق پہ لکھی گئی ایک داستاں کی کتاب

اور دل یہ بھی چاہے کہ چھت پہ جا کے ۔ ۔

رات کی تنہائی ۔ ۔

چاند کی اداسی ۔ ۔

۔ ۔ اور لمحوں کی بےبسی کو

اپنے اندر اتار کے ۔ ۔

خود کو عشقِ لاحاصل میں قید کر لیا جائے

اور ایسے میں کسی کی یاد نہ آئے

۔ ۔ ۔

ںا مُمکن

Side table pe chaey ka cuP..

Hath mein ISHQ pe likhi gai ek dastaan ki kitaB..

Aur dil ye bhi chahay k chhat pe ja K..

Raat ki tanhaI..

Chand ki udasI.. …

Aur lamhon ki be-basi kO..

Apne andar utaar K..

Khud ko ISHQ-E-LAHASIL mein qaid kr liya jaeY..

Aur Aisay mein kisi ki yad na aaeY..

Na-mumkiN..!