Tag Archives: pakistan

Koi to Hai Jo Nizam e hasti chala raha hai – Muzaffar Warsi – Hamd

Video

کوئی تو ہے جو ـــــ نظامِ ہستی چلا رہا ہے ـــــ وہی خدا ہے

حمد خواں : مظفر وارثی

Hamd: Koi to hai jo nizaam e hasti chala raha hai , Wohi KHUDA Hai
Reciter: Muzaffar Warsi

“THE” best and most favorite Hamd recitation of all time.

Audio version on soundcloud for easier listening and downloading :


 

کوئی تو ہے جو ـــــ نظامِ ہستی چلا رہا ہے ـــــ وہی خدا ہے

دکھائی بھی جو نہ دے ـــــ نظر بھی جو آرہا ہے ـــــ وہی خدا ہے

 
وہی ہے مشرق ـــــ وہی ہے مغرب ـــــ سفر کریں سب اُسی کی جانب

ہر آئینے میں جو عکس اپنا دکھا رہا ہے ــــــ وہی خدا ہے

 
تلاش اُس کو نہ کر بتوں میں ــــــ وہ ہے بدلتی ہوئی رُتوں میں

جو دن کو رات اور رات کو دن بنا رہا ہے ــــــ وہی خدا ہے

 
نظر بھی رکھے ،سماعتیں بھی ـــــ وہ جان لیتا ہے نیتیں بھی

جو خانہء لاشعور میں جگمگا رہا ہے ــــــ وہی خدا ہے

 
کسی کو سوچوں نے کب سراہا ــــــ وہی ہوا جو خدا نے چاہا

جو اختیارِ بشر پہ پہرے بٹھا رہا ہے ـــــ وہی خدا ہے

 
کسی کو تاجِ وقار بخشے ــــ کسی کو ذلت کے غار بخشے

جو سب کے ماتھے پہ مہرِ قدرت لگا رہا ہے ـــــ وہی خدا ہے

 
سفید اُس کا سیاہ اُس کا ـــــ نفس نفس ہے گواہ اُس کا

جو شعلہء جاں جلا رہا ہے ـــــ بُجھا رہا ہے ـــــ وہی خدا ہے

ـــــــــــــــــــــــ

مظفر وارثی

 

Koi to hai jo __ nizam e hasti chala raha hai __ Wohi KHUDA Hai
Dikhai bhi jo na de __ nazar bhi jo aa raha hai __ Wohi KHUDA Hai

Wohi hai mashriq __ wohi hai maghrib __ safar karain sab usi ki jaanib
Har aainay main jo aks apna dikha raha hai __ Wohi KHUDA Hai

Talaash Us ko na kar b’utoN main __ Wohi KHUDA Hai
Jo din ko raat aur raat ko din bana raha hai __ Wohi KHUDA Hai

Nazar bhi rakhay , sama’atain bhi __ Woh jaan leta hai niyatain bhi
Jo khaana E la-shaoor jagmaga raha hai __ Wohi KHUDA Hai

Kisi ko socho’n ne kab saraha __ wohi hua jo KHUDA ne chaha
Jo ikhtiyar e bashr pe pehray bitha raha hai __ Wohi KHUDA Hai

Kisi ko taj E waqar bakhshay __ Kisi ko zillat ke ghaar bakhshay
Jo sab ke maathay pe mohr e qudrat laga raha hai __ Wohi KHUDA Hai

Safaid Us ka siyah Us ka __ nafas nafaz hai gawah Us ka
Jo shola e jaa’n jalaa raha hai __  bujha raha hai __  Wohi KHUDA Hai
_____
Muzaffar Warsi

Advertisements

غصہ و تکبر

Standard


 سنٹرل جیل میں مجھے راؤ اکبر صاحب کے اطمینان ۔ اس کے سکون اور اس کی شخصیت نے حیران کر دیا ۔ وہ چند دن بعد پھانسی پانے والا تھا ۔ صدر نے اس کی اپیل مسترد کر دی تھی ۔ پوری جیل مغموم تھی مگر اس کے چہرے پر گہرا اطمینان ۔ گہرا سکون تھا ۔
جیل کے تمام قیدی ۔ سرکاری اور غیر سرکاری عملہ اس کی بہت عزت کرتے تھے ۔
 وہ جیل کی مدر ٹریسا تھا اور سب کے دکھ درد کا ساتھی تھا ۔ خوش حال آدمی تھا ۔ لواحقین ۔ عزیز رشتے دار ۔ بہن بھائی اور دوست احباب کھاتے پیتے لوگ تھے ۔ وہ جیل میں جس کو پریشان دیکھتا تھا اسے رقعہ لکھ دیتا تھا اور اسکا مسئلہ حل ہو جاتا تھا ۔ وہ انتہائی سمجھ دار ۔ وضع دار اور شاندار انسان تھا مگر اس کے باوجود قتل کے جرم میں جیل میں بند تھا ۔ اور پھانسی کی سزا کا منتظر ۔ میں اس بات پر حیران تھا ۔
پھر میں نے ایک دن اس سے پوچھ ہی لیا:
“راؤ صاحب کیا آپ نے واقعی قتل کیا تھا؟”
راؤ صاحب نے جواب دیا: 
“ہاں کیا تھا”
میں نے پوچھا: 
”کیا واقعہ ہوا؟” 
Read the rest of this entry

سوچی پئے آں ہُن کی کریے؟ (Sochi Paye Aa’n Hun Ki Kariye – Anwar Masood)

Standard

سوچی پئے آں ہُن کی کریے


 

پپو سانوں تنگ نہ کر تُوں

بڑے ضروری کم لگے آں

سوچی پئے آں ہُن کی کریے

 

روٹی شوٹی کھا بیٹھے آں

لسی شسی پی بیٹھے آں

حقے دا کش لا بیٹھے آں

پونج پانجھ کے اندروں باہروں

پانڈے وی کھڑکا بیٹھے آں

سوچی پئے آں ہُن کی کریے

 

ویکھ لیاں نے سب اخباراں

سبھے ورقےتُھل بیٹھے آں

پڑھ بیٹھے آں سارے اکھر

سارے حرف سنا بیٹھے آں

سوچی پئے آں ہُن کی کریے

 

کیسے کیسے اسلحے بن گئے

وڈے وڈے مسئلے بن گئے

وڈے شہر وسا بیٹھے آں

سارا چین گنوا بیٹھے آں

سوچی پئے آں ہُن کی کریے

 

رزق، سیاست ، عشق کوِتا

کُجھ وی خالص رہن نہ دِتا

ساری کیڈھ ونجا بیٹھے آں

دودھ وچ سرکہ پا بیٹھے آں

سوچی پئے آں ہُن کی کریے

 

جی کردا سی ووٹاں پائیے

مارشل لاء توں جاں چھڈائیے

ووٹاں شوٹاں پا بیٹھے آں

اے جمہوری رولا رَپا

کنے سال ہنڈا بیٹھے آں

سوچی پئے آں ہُن کی کریے

 

سودا کوئی پجھدا ناہیں

کوئی رستہ سُجھدا ناہیں

رستے وچ آ بیٹھے آں

سوچی پئے آں ہُن کی کریے

 

انور مسعود

(Source)

کوٹ رادھا کشن کا بھٹا(Kot Raadha-Kishan ka Bhatta)

Standard


کوٹ رادھا کشن کا بھٹا

 

مہندس ہوں

مکانوں کی مگر تعمیر سے

لگتا ہے ڈر مجھ کو

کسی بھی اب عمارت میں

کوئی بھی اینٹ لگتی ہے

نظر آتے ہیں اس میں

نقش بِریاں جھلسے چہروں کے

پگھلتے ہاتھ، ٹانگیں، پیٹ، آنتیں

تڑتڑاتی ہڈیاں ساری

دکھائی دینے لگتی ہیں

سنائی دینے لگتی ہیں

اذیت ناک آوازیں

دریچوں میں، چھتوں میں، بام و در میں گونجتی ہیں

سوختہ روحوں کی چیخیں

گوشت جلنے کی سڑاند آتی ہے دیواروں سے

یوں لگتا ہے

ہر اک خشت جیسے

کوٹ رادھا کے پژاوے ہی سے آئی ہو

بجائے کوئلوں کے

زندہ انسانوں کو دہکا کر پکائی ہو

 

شاعر: نصیر احمد ناصر


 

Ae puttar hatta’n te nai wikday (اے پُتر ہٹاں تے نئیں وکدے)

Standard


 

اے پُتر ہٹاں تے نئیں وکدے ۔ ۔ ۔ ۔ تُو لبھنی ایں وچ بازار کُڑے ۔ ۔ ۔

اے دین اے میرے داتا دی ۔ ۔ ۔ ۔ نہ ایویں ٹکراں مار کڑے ۔ ۔ ۔

اے پُتر وِکاو ُ چیز نئیں ۔ ۔ ۔ ۔ مُل دے کے جھولی پائیے نی ۔ ۔ ۔

اے ایڈا سستا مال نئیں ۔ ۔ ۔ ۔ کی توں جاکے منگ لیائیے نِی ۔ ۔ ۔

اے سودا نقد وی نئیں ملدا ۔ ۔ ۔ ۔ تُو لبھدی پھریں ادھار کڑے ۔ ۔ ۔

اے پُتر ہٹاں تے نئیں وکدے ۔ ۔ ۔ ۔

اے شیر بہادر غازی نیں ۔ ۔ ۔ ۔ اے کسے کولوں وی ہردے نئیں ۔ ۔۔

انیاں دشمناں کولوں کی ڈرنا ۔۔ ۔ ۔ اے موت کولوں وِی ڈردے نئیں ۔ ۔ ۔

اے اپنے دیس دی عزت توں ۔ ۔ ۔ ۔ جان اپنی دیندے وار کڑے ۔ ۔ ۔

اے پُتر ہٹاں تے نئیں وکدے ۔ ۔ ۔ ۔

دھن بھاگ نیں اونہا ں ماواں دے ۔ ۔ ۔۔ جِنہاں ماواں دے لائے نیں ۔ ۔ ۔

دھن بھاگ نیں بھین بھراواں دے ۔ ۔ ۔ ۔ جِنہاں گودیا ں وِیر کھڈائے نیں ۔ ۔ ۔

مان نیں ماناں والئے دے ۔ ۔ ۔۔ نئیں ایس دی تینوں ساڑھ کڑے ۔ ۔ ۔

اے پُتر ہٹاں تے نئیں وکدے ۔ ۔ ۔ ۔

شاعر : صوفی تبسم

 

 

Note: The images are taken from web and respective designer’s websites/blogs. I do not mean to infringe the any copyright. If the owner has any issue then contact me and I will remove the images.