Tag Archives: Poetry

Tum Na Jaan Pao Ge – Gulzar (تم نہ جان پاؤ گے – گلزار)

Standard

34200130-cms

شہر کے دوکاندارو ______ کاروبارِ الفت میں

سود کیا زیاں کیا ہے ______ تم نہ جان پاؤ گے

دل کے دام کتنے ہیں _____ خواب کتنے مہنگے ہیں

اور نقدِ جاں کیا ہے

تم نہ جان پاؤ گے

کوئی کیسے ملتا ہے _____ پھول کیسے کھلتا ہے

آنکھ کیسے جھکتی ہے _____ سانس کیسے رُکتی ہے

کیسے رہ نکلتی ہے ______ کیسے بات چلتی ہے

شوق کی زباں کیا ہے

تم نہ جان پاؤ گے

وَصل کا سکوں کیا ہے ______ ہجر کا جنوں کیا ہے

حُسن کا فسوں کیا ہے ______ عشق کے دروں کیا ہے

تم مریضِ دانائی ______ مصلحت کے شیدائی

راہِ گمراہاں کیا ہے

تم نہ جان پاؤ گے

زخم کیسے پھلتے ہیں ______ داغ کیسے جلتے ہیں

درد کیسے ہوتا ہے ______ کوئی کیسے روتا ہے

اشک کیا ہیں نالے کیا ______ دشت کیا ہیں چھالے کیا

آہ کیا فغاں کیا ہے

تم نہ جان پاؤ گے

نا مُرادِ دل کیسے ______ صبح شام کرتے ہیں

کیسے زندہ رہتے ہیں ______ اور کیسے مرتے ہیں

تم کو کب نظر آئی ______ غمزدوں کی تنہائی

زیست بے امان کیا ہے

تم نہ جان پاؤگے

جانتا ہوں میں تم کو ______ ذوقِ شاعری بھی ہے

شخصیت سجانے میں ______ اِک یہ ماہری بھی ہے

پھر بھی حرف چُنتے ہو ______ صرف لفظ سُنتے ہو

اِن کے درمیاں کیا ہے

تم نہ جان پاؤ گے

__________

جاوید اختر

020416_0845_2.png

Shehar Ke Dukandaro ___ Karobaar-E-Ulfat Mein

Sood Kia Zian Kia Hai ___ Tum Na Jaan Pao Gay

Dil Ke Daam Kitne Hein ___ Khuwab Kitne Mehnge Hein

Aur Naqd-E-Jaan Kia Hai

Tum Na Jaan Pao Gay

Koi Kaisay Milta Hai ___ Phool Kaisay Khilta Hai

Aankh Kaisay Jhukti Hai ___ Saans Kaisay Rukti Hai

Kaisay Reh Nikalti Hai ___ Kaisay Baatein Chalti Hai

Shouq Ki Zabaan Kya Hai

Tum Na Jaan Pao Gay

Wasl Ka Sukoon Kya Hai ___ Hijr Ka Junoon Kya Hai

Husn Ka Fusoon Kya Hai ___ Ishq Ke Daroon Kya Hai

Tum Mareez-E-Danai ___ Maslihat Ke Shaydai

Raah-E-Gumrahan Kya Hai

Tum Na Jaan Pao Gay

Zakhm Kaisay Phaltay Hein ___ Daagh Kaisay Jaltay Hein

Dard Kaisay Hota Hai ___ Koi Kaisay Rota Hai

Ashq Kia Hai Nalay Kia ___ Dasht Kia Hai Chalay Kia

Aah Kia Fughaan Kya Hai

Tum Na Jaan Pao Gay

Namuraad Dil Kaisay ___ Subah Shaam Kartay Hein

Kaisay Zinda Rehtay Hein ___ Aur Kaisay Martay Hein

Tum Ko Kab Nazar Aayi ___ Ghamzadoon Ki Tanhai

Zeest Be-Umaan Kia Hai

Tum Na Jaan Pao Gay

Janta Hoon Mein Tum Ko ___ Zouq-E-Shaiyri Bhi Hai

Shaksiyat Sayjanay Mein ___ Ik Yeh Mahiri Bhi Hai

Phir Bhi Harf Chuntay Ho ___ Sirf Lafz Suntay Ho

In Ke Darmiyaan Kya Hai

Tum Na Jaan Pao Gay

______________________

~~ Gulzar ~~

Note: To best view this post please install these beautiful Urdu fonts: Alvi Nastaleeq / Jameel Noori (kasheeda) and other fonts from thispublic shared Urdu Fonts folder

Rah e Shauq Se Ab Hata Chaahta Hoon (رہِ شوق سے اب ہٹا چاہتا ہوں)

Standard

رہِ شوق سے اب ہٹا چاہتا ہوں

کشش حسن کی دیکھنا چاہتا ہوں

کوئی دل سا درد آشنا چاہتا ہوں

رہِ عشق میں رہنما چاہتا ہوں

تجھی سے تجھے چھیننا چاہتا ہوں

یہ کیا چاہتا ہوں ، یہ کیا چاہتا ہوں

خطاؤں پہ جو مجھ کو مائل کرے پھر

سزا اور ایسی سزا چاہتا ہوں

وہ مخمور نظریں وہ مدہوش آنکھیں

خرابِ محبت ہوا چاہتا ہوں

وہ آنکھیں جھکیں وہ کوئی مسکرایا

پیامِ محبت سنا چاہتا ہوں

تجھے ڈھونڈتا ہوں تری جستجو ہے

مزا ہے کہ خود گم ہوا چاہتا ہوں

یہ موجوں کی بے تابیاں کون دیکھے

میں ساحل سے اب لوٹنا چاہتا ہوں

کہاں کا کرم اور کیسی عنایت

مجاز اب جفا ہی جفا چاہتا ہوں

۔ اسرار الحق مجاز ۔

020416_0845_2.png

The beautiful art is by brilliant artist Cyril Rolando (AquaSixio)

Raahat e Dil .. Mata’ e Jaan Hai Tu(راحتِ دل متاعِ جاں ہے تو)

Standard

راحتِ دل متاعِ جاں ہے تو

اے غمِ دوست جاوداں ہے تو

 

آنسوؤں پر بھی تیرا سایہ ہے

دھوپ کے سر پر سائباں ہے تو

 

دل تری دسترس میں کیوں نہ رہے

اس زمیں پر تو آسماں ہے تو

 

شامِ شہر اداس کے والی

اے مرے مہرباں کہاں ہے تو

 

سایہء ابرِ رائیگاں ہوں میں

موجِ بحرِ بیکراں ہے تو

 

میں تہہِ دست وگرد پیرہن

لال و الماس کی دکاں ہے تو

 

لمحہ بھر مل کے روٹھنے والے

زندگی بھر کی داستاں ہے تو

 

کفر و ایماں کے فاصلوں کی قسم

اے متاعِ یقین گماں ہے تو

 

تیرا اقرار ہے نفی میری

میرے اثبات کا جہاں ہے تو

 

جو مقدر سنوار دیتے ہیں

ان ستاروں کی کہکشاں ہے تو

 

بے نشاں بے نشاں خیام میرے

کارواں کارواں رواں ہے تو

 

جلتے رہنا چراغِ آخرِ شب

اپنے محسن کا رازداں ہے تو

۔ محسن نقوی ۔

 

Raahat e dil .. Mata’ e jaan hai tu

Aye gham e dost jawedaan hai tu

 

Aansoun par bhi tera saya hai

Dhoop k sar pe saibaan hai tu

 

Dil teri dastaras main kyoun na rahay

Is zameen par to aasmaan hai tu

 

Shaam e shehr e udaas k wali !

Aye mere meherbaan kaha hai tu ?

 

Saya e abr e raigaan hoon main

Mauj e beher e bekaraan hai tu

 

Main tahe dast wa gard perahan

Laal o almas ki dukaan hai tu

 

Lamha bhar mil k roothnay walay

Zindagi bhar ki dastaan hai tu

 

Kufr o emaan k fasloun ki qasam

Aye Mata e yaqeen , gumaan hai tu

 

Tera iqraar hai nafi meri

Mere asbaat ka jahaan hai tu

 

Jo muqaddar sanwaar detay hain !

Un sitaroun ki kehkashan hai tu

 

Be nishaan be nishaan khayaam mere

Karvaan karvaan rawaan hai tu

 

Jaltay rehna chiraagh e aakhr e shab

Apne Mohsin ka raazdaan hai tu

– Mohsin Naqvi –

 

Note: To best view this post please install these beautiful Urdu fonts: Alvi Nastaleeq / Jameel Noori (kasheeda) and other fonts from this public shared Urdu Fonts folder
Image is not mine, taken from internet. Image is painting by artist Andre Kohn (link)

مجھے اپنے ضبط پہ ناز تھا (Mujhe apne zabt pe naaz tha)

Standard


مجھے اپنے ضبط پہ ناز تھا سرِ بزم رات یہ کیا ہوا


مری آنکھ کیسے چھلک گئی مجھے رنج ہے یہ برا ہوا

 


مری زندگی کے چراغ کا یہ مزاج کوئی نیا نہیں


ابھی روشنی ابھی تیرگی، نہ جلا ہوا نہ بجھا ہوا

 


مجھے جو بھی دشمنِ جاں ملا وہی پختہ کارِ جفا ملا


نہ کسی کی ضرب غلط پڑی، نہ کسی کا تیر خطا ہوا

 


مجھے آپ کیوں نہ سمجھ سکے کبھی اپنے دل سے بھی پوچھئے


مری داستانِ حیات کا تو ورق ورق ہے کھلا ہوا

 


جو نظر بچا کے گزر گئے مرے سامنے سے ابھی ابھی


یہ مرے ہی شہر کے لوگ تھے مرے گھر سے گھر ہے ملا ہوا

 


ہمیں اس کا کوئی بھی حق نہیں کہ شریکِ بزمِ خلوص ہوں


نہ ہمارے پاس نقاب ہے نہ کچھ آستیں میں چھپا ہوا

 


مرے ایک گوشہ فکر میں، میری زندگی سے عزیز تر


مرا ایک ایسا بھی دوست ہے جو کبھی ملا نہ جدا ہوا

 


مجھے ایک گلی میں پڑا ہوا کسی بدنصیب کا خط ملا


کہیں خونِ دل سے لکھا ہوا، کہیں آنسوؤں سے مٹاہوا

 


مجھے ہم سفر بھی ملا کوئی تو شکستہ حال مری طرح


کئی منزلوں کو تھکا ہوا، کہیں راستے میں لٹا ہوا

 


ہمیں اپنے گھر سے چلے ہوئے سرِ راہ عمر گزر گئی


کوئی جستجو کا صلہ ملا، نہ سفر کا حق ہی ادا ہوا

 

اقبال عظیم

 


 

Mujhe apne zabt pe naaz tha , sar e bazm raat ye kya hua

Meri aankh kaise chalak gayi , mujhe ranj hai ye bura hua

 

Meri zindagi ke charagh ka ye mizaaj koi naya nahi

Abhi roshni abhi teergi , na jala hua na bujha hua

 

Mujhe jo bhi dushman e jaan mila , wohi pukhta kaar e jafa mila

Na kisi ki zarb galat pari , na kisi ka teer khata hua

 

Mujhe aap kiun samajh na sake kabhi apne dil se bhi pochiye

Meri daastan e hayaat ka to warq warq hai khula hua

 

Jo nazar bacha k guzar gaye mere saamne se abhi abhi

Ye mere hi shehr k log thay mere ghar se ghar hai mila hua

 

Hamain is ka koi bhi haq nahi k shareeq e bazm e khuloos hon

Na hamare paas naqaab hai na kuch aasteen mai chupa hua

 

Mere ek gosha e fikr mai meri zindagi se azeez tar

Mera ek aisa bhi dost hai jo kabhi mila na juda hua

 

Mujhe ik gali mai para hua kisi badnaseeb ka khat mila

Kahin khoon e dil se likha hua kahin aansuon se mita hua

 

Mujhe hamsafar bhi mila koi to shikasta haal meri tarha

Koi manzilon ka thaka hua kahin raaste mai luta hua

 

Hamai apne ghar se chalay hue Sar e raah umr guzar gai

Koi justuju ka sila mila na safar ka haq hi ada hua

~ Iqbal Azeem

چائے ۔ ۔ ۔(Chai)

Standard

chai best gif ever

بہت عرصہ ہوا اک دن

بتایا تھا اس نے مجھے

بنانا کچھ نہیں آتا

اگر میں کچھ بناتی ہوں تو بس چائے بناتی ہوں

پیو گے نا ؟

اور میں اس بات پر مسکراتا ہی رہتا تھا

کہ بنانا کچھ نہیں آتا

بناتی ہو تو بس چائے

مجھے چائے سے الجھن ہے

نہیں پیتا ، نہیں پیتا

اور اس بات کو گزرے ، زمانے ہو گئے کتنے

نہیں معلوم مجھ کو و ہ کیسی ہے

کہاں پر ہے

مگر اب چائے پیتا ہوں ۔ ۔ ۔

بڑی کثرت سے پیتا ہوں ۔ ۔ ۔


Bohat arsa huwa ik Din

Bataya tha us ne Mujhe

Banana kuch nahi Aata

Agar main kuch banati ho to bas Chai banati Hoon

Piyo ge Na ?

Aur main is baat per muskurata hi rehta Tha

Ke banana kuch nahi Aata

Banati ho to bass Chai

Mujhe Chai se uljhan Hai

Nahi peeta , nahi Peeta

Aur ab us baat ko guzre , zamanay ho gaye Kitne

Nahi maaloom mujhko wo kaisi Hai

Kahan per Hai

Magar ab Chai peeta Hoon ! ….

Bari kasrat se peeta Hoon ! ….

Note: To best view this post please install this beautiful Urdu font: Alvi Nastaleeq.

Image is not mine, taken from internet.