Tag Archives: sad

Kaha tha na … (کہا تھا ناں)

Standard

کہا تھا ناں

مجھے تم اس طرح سوتے ہوئے مت چھوڑ کر جانا

مجھے بےشک جگا دینا

بتا دینا

محبت کے سفر میں ساتھ میرے چل نہیں سکتی

جدائی میں ، ہجر میں ، ساتھ میرے چل نہیں سکتی

تمہیں رستہ بدلنا ہے

مری حد سے نکلنا ہے

تمہیں کس بات کا ڈر تھا ؟

تمہیں جانے نہیں دیتا ؟

کہیں پہ قید کر لیتا ؟

ارے پگلی ۔ ۔ ۔

محبت کی طبیعت میں

زبردستی نہیں ہوتی

جسے رستہ بدلنا ہو ، اسے رستہ بدلنے سے

جسے حد سے نکلنا ہو، اسے حد سے نکلنے سے

نہ کوئی روک پایا ہے

نہ کوئی روک پائے گا

۔ ۔ ۔

تمہیں کس بات کا ڈر تھا ؟

مجھے بےشک جگا دیتی

میں تم کو دیکھ ہی لیتا

تمہیں کوئی دعا دیتا

کم از کم یوں تو نہ ہوتا

میرے ساتھی ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔

حقیقت ہے ۔ ۔ ۔

تمھارے بعد کھونے کے لیے کچھ بھی نہیں باقی

مگر کھونے سے ڈرتا ہوں

میں اب سونے سے ڈرتا ہوں

(۔ عاطف سعید ۔)


kaha tha na !!

mujhe is tarah sotay hoye mat chor k jana

mujhe beshak jagga dena

bata dena

muhabbat k safar mein saath meray chal nahi sakti

judai main, hijr main, saath meray chal nahi sakti

tumhain rasta badalna hai

meri had se nikalna hai

tumhain kis baat ka dar tha ?

tumhain jaanay nahi deta ?

kahin pe qaid kar leta ?

aray pagli … !

muhabbat ki tabiyat mein

zabardasti nahi hoti

jisay rasta badalna ho . . . usay rasta badalnay se

jisay had se nikalna ho . . . usay had se nikalnay se

na koi rok paya hai

na koi rok paye ga

tumhain kis baat ka dar tha ?

mujhe beshak jagga deti

main tum ko “dekh” hi leta

tumhain koi dua deta

kam az kam yun to na hota …

mere sathi … haqeeqat hai !

tumharay baad khonay k liye kuch bhi nahi baqi…

magar khonay se darta hoon

main ab sonay se darta hoon!

(Atif Saeed)

Advertisements

Udaas logo’n se pyar karna koi to seekhay(اُداس لوگوں سے پیار کرنا کوئی تو سیکھے)

Standard


اُداس لوگوں سے پیار کرنا کوئی تو سیکھے

سفید لمحوں میں رنگ بھرنا کوئی تو سیکھے

کوئی تو آئے خزاں میں پتے اُگانے والا

گلُوں کی خوشبو کو قید کرنا کوئی تو سیکھے

کوئی دیکھائے محبتوں کے سراب مجھکو

میری نگاہوں سے بات کرنا کوئی تو سیکھے

کوئی تو آئے نئی رُتوں کا پیام لے کر

اندھیری راتوں میں چاند بننا کوئی تو سیکھے

کوئی پیامبر کوئی امام ِزماں ہی آئے

اسیر ِذہنوں میں سوچ بھرنا کوئی تو سیکھے


شاعرہ: نیلیمہ درانی

Udaas logo’n se pyar karna koi to seekhay

Safaid lamho’n main rang bharna koi to seekhay

Koi to aye khazaa’n main pat’ay uganay wala

Gulo’n ki khushbu ko qaid karna koi to seekhay

Koi dikhaye muhabbato’n k saraab mujhko

Meri nigaaho’n se baat karna koi to seekhay

Koi to aye nai ruto’n ka payaam le kar

Andheri raato’n main chaand banna koi to seekhay

Koi payaam-bar , koi imam-e-zamaa’n hi aye . . .

Aseer zehno’n main soch bharna koi to seekhay


Poet: Nilllima Durani