Tag Archives: shayari

Tum Na Jaan Pao Ge – Gulzar (تم نہ جان پاؤ گے – گلزار)

Standard

34200130-cms

شہر کے دوکاندارو ______ کاروبارِ الفت میں

سود کیا زیاں کیا ہے ______ تم نہ جان پاؤ گے

دل کے دام کتنے ہیں _____ خواب کتنے مہنگے ہیں

اور نقدِ جاں کیا ہے

تم نہ جان پاؤ گے

کوئی کیسے ملتا ہے _____ پھول کیسے کھلتا ہے

آنکھ کیسے جھکتی ہے _____ سانس کیسے رُکتی ہے

کیسے رہ نکلتی ہے ______ کیسے بات چلتی ہے

شوق کی زباں کیا ہے

تم نہ جان پاؤ گے

وَصل کا سکوں کیا ہے ______ ہجر کا جنوں کیا ہے

حُسن کا فسوں کیا ہے ______ عشق کے دروں کیا ہے

تم مریضِ دانائی ______ مصلحت کے شیدائی

راہِ گمراہاں کیا ہے

تم نہ جان پاؤ گے

زخم کیسے پھلتے ہیں ______ داغ کیسے جلتے ہیں

درد کیسے ہوتا ہے ______ کوئی کیسے روتا ہے

اشک کیا ہیں نالے کیا ______ دشت کیا ہیں چھالے کیا

آہ کیا فغاں کیا ہے

تم نہ جان پاؤ گے

نا مُرادِ دل کیسے ______ صبح شام کرتے ہیں

کیسے زندہ رہتے ہیں ______ اور کیسے مرتے ہیں

تم کو کب نظر آئی ______ غمزدوں کی تنہائی

زیست بے امان کیا ہے

تم نہ جان پاؤگے

جانتا ہوں میں تم کو ______ ذوقِ شاعری بھی ہے

شخصیت سجانے میں ______ اِک یہ ماہری بھی ہے

پھر بھی حرف چُنتے ہو ______ صرف لفظ سُنتے ہو

اِن کے درمیاں کیا ہے

تم نہ جان پاؤ گے

__________

جاوید اختر

020416_0845_2.png

Shehar Ke Dukandaro ___ Karobaar-E-Ulfat Mein

Sood Kia Zian Kia Hai ___ Tum Na Jaan Pao Gay

Dil Ke Daam Kitne Hein ___ Khuwab Kitne Mehnge Hein

Aur Naqd-E-Jaan Kia Hai

Tum Na Jaan Pao Gay

Koi Kaisay Milta Hai ___ Phool Kaisay Khilta Hai

Aankh Kaisay Jhukti Hai ___ Saans Kaisay Rukti Hai

Kaisay Reh Nikalti Hai ___ Kaisay Baatein Chalti Hai

Shouq Ki Zabaan Kya Hai

Tum Na Jaan Pao Gay

Wasl Ka Sukoon Kya Hai ___ Hijr Ka Junoon Kya Hai

Husn Ka Fusoon Kya Hai ___ Ishq Ke Daroon Kya Hai

Tum Mareez-E-Danai ___ Maslihat Ke Shaydai

Raah-E-Gumrahan Kya Hai

Tum Na Jaan Pao Gay

Zakhm Kaisay Phaltay Hein ___ Daagh Kaisay Jaltay Hein

Dard Kaisay Hota Hai ___ Koi Kaisay Rota Hai

Ashq Kia Hai Nalay Kia ___ Dasht Kia Hai Chalay Kia

Aah Kia Fughaan Kya Hai

Tum Na Jaan Pao Gay

Namuraad Dil Kaisay ___ Subah Shaam Kartay Hein

Kaisay Zinda Rehtay Hein ___ Aur Kaisay Martay Hein

Tum Ko Kab Nazar Aayi ___ Ghamzadoon Ki Tanhai

Zeest Be-Umaan Kia Hai

Tum Na Jaan Pao Gay

Janta Hoon Mein Tum Ko ___ Zouq-E-Shaiyri Bhi Hai

Shaksiyat Sayjanay Mein ___ Ik Yeh Mahiri Bhi Hai

Phir Bhi Harf Chuntay Ho ___ Sirf Lafz Suntay Ho

In Ke Darmiyaan Kya Hai

Tum Na Jaan Pao Gay

______________________

~~ Gulzar ~~

Note: To best view this post please install these beautiful Urdu fonts: Alvi Nastaleeq / Jameel Noori (kasheeda) and other fonts from thispublic shared Urdu Fonts folder

Koi to Hai Jo Nizam e hasti chala raha hai – Muzaffar Warsi – Hamd

Video

کوئی تو ہے جو ـــــ نظامِ ہستی چلا رہا ہے ـــــ وہی خدا ہے

حمد خواں : مظفر وارثی

Hamd: Koi to hai jo nizaam e hasti chala raha hai , Wohi KHUDA Hai
Reciter: Muzaffar Warsi

“THE” best and most favorite Hamd recitation of all time.

Audio version on soundcloud for easier listening and downloading :


 

کوئی تو ہے جو ـــــ نظامِ ہستی چلا رہا ہے ـــــ وہی خدا ہے

دکھائی بھی جو نہ دے ـــــ نظر بھی جو آرہا ہے ـــــ وہی خدا ہے

 
وہی ہے مشرق ـــــ وہی ہے مغرب ـــــ سفر کریں سب اُسی کی جانب

ہر آئینے میں جو عکس اپنا دکھا رہا ہے ــــــ وہی خدا ہے

 
تلاش اُس کو نہ کر بتوں میں ــــــ وہ ہے بدلتی ہوئی رُتوں میں

جو دن کو رات اور رات کو دن بنا رہا ہے ــــــ وہی خدا ہے

 
نظر بھی رکھے ،سماعتیں بھی ـــــ وہ جان لیتا ہے نیتیں بھی

جو خانہء لاشعور میں جگمگا رہا ہے ــــــ وہی خدا ہے

 
کسی کو سوچوں نے کب سراہا ــــــ وہی ہوا جو خدا نے چاہا

جو اختیارِ بشر پہ پہرے بٹھا رہا ہے ـــــ وہی خدا ہے

 
کسی کو تاجِ وقار بخشے ــــ کسی کو ذلت کے غار بخشے

جو سب کے ماتھے پہ مہرِ قدرت لگا رہا ہے ـــــ وہی خدا ہے

 
سفید اُس کا سیاہ اُس کا ـــــ نفس نفس ہے گواہ اُس کا

جو شعلہء جاں جلا رہا ہے ـــــ بُجھا رہا ہے ـــــ وہی خدا ہے

ـــــــــــــــــــــــ

مظفر وارثی

 

Koi to hai jo __ nizam e hasti chala raha hai __ Wohi KHUDA Hai
Dikhai bhi jo na de __ nazar bhi jo aa raha hai __ Wohi KHUDA Hai

Wohi hai mashriq __ wohi hai maghrib __ safar karain sab usi ki jaanib
Har aainay main jo aks apna dikha raha hai __ Wohi KHUDA Hai

Talaash Us ko na kar b’utoN main __ Wohi KHUDA Hai
Jo din ko raat aur raat ko din bana raha hai __ Wohi KHUDA Hai

Nazar bhi rakhay , sama’atain bhi __ Woh jaan leta hai niyatain bhi
Jo khaana E la-shaoor jagmaga raha hai __ Wohi KHUDA Hai

Kisi ko socho’n ne kab saraha __ wohi hua jo KHUDA ne chaha
Jo ikhtiyar e bashr pe pehray bitha raha hai __ Wohi KHUDA Hai

Kisi ko taj E waqar bakhshay __ Kisi ko zillat ke ghaar bakhshay
Jo sab ke maathay pe mohr e qudrat laga raha hai __ Wohi KHUDA Hai

Safaid Us ka siyah Us ka __ nafas nafaz hai gawah Us ka
Jo shola e jaa’n jalaa raha hai __  bujha raha hai __  Wohi KHUDA Hai
_____
Muzaffar Warsi

Rah e Shauq Se Ab Hata Chaahta Hoon (رہِ شوق سے اب ہٹا چاہتا ہوں)

Standard

رہِ شوق سے اب ہٹا چاہتا ہوں

کشش حسن کی دیکھنا چاہتا ہوں

کوئی دل سا درد آشنا چاہتا ہوں

رہِ عشق میں رہنما چاہتا ہوں

تجھی سے تجھے چھیننا چاہتا ہوں

یہ کیا چاہتا ہوں ، یہ کیا چاہتا ہوں

خطاؤں پہ جو مجھ کو مائل کرے پھر

سزا اور ایسی سزا چاہتا ہوں

وہ مخمور نظریں وہ مدہوش آنکھیں

خرابِ محبت ہوا چاہتا ہوں

وہ آنکھیں جھکیں وہ کوئی مسکرایا

پیامِ محبت سنا چاہتا ہوں

تجھے ڈھونڈتا ہوں تری جستجو ہے

مزا ہے کہ خود گم ہوا چاہتا ہوں

یہ موجوں کی بے تابیاں کون دیکھے

میں ساحل سے اب لوٹنا چاہتا ہوں

کہاں کا کرم اور کیسی عنایت

مجاز اب جفا ہی جفا چاہتا ہوں

۔ اسرار الحق مجاز ۔

020416_0845_2.png

The beautiful art is by brilliant artist Cyril Rolando (AquaSixio)

Raahat e Dil .. Mata’ e Jaan Hai Tu(راحتِ دل متاعِ جاں ہے تو)

Standard

راحتِ دل متاعِ جاں ہے تو

اے غمِ دوست جاوداں ہے تو

 

آنسوؤں پر بھی تیرا سایہ ہے

دھوپ کے سر پر سائباں ہے تو

 

دل تری دسترس میں کیوں نہ رہے

اس زمیں پر تو آسماں ہے تو

 

شامِ شہر اداس کے والی

اے مرے مہرباں کہاں ہے تو

 

سایہء ابرِ رائیگاں ہوں میں

موجِ بحرِ بیکراں ہے تو

 

میں تہہِ دست وگرد پیرہن

لال و الماس کی دکاں ہے تو

 

لمحہ بھر مل کے روٹھنے والے

زندگی بھر کی داستاں ہے تو

 

کفر و ایماں کے فاصلوں کی قسم

اے متاعِ یقین گماں ہے تو

 

تیرا اقرار ہے نفی میری

میرے اثبات کا جہاں ہے تو

 

جو مقدر سنوار دیتے ہیں

ان ستاروں کی کہکشاں ہے تو

 

بے نشاں بے نشاں خیام میرے

کارواں کارواں رواں ہے تو

 

جلتے رہنا چراغِ آخرِ شب

اپنے محسن کا رازداں ہے تو

۔ محسن نقوی ۔

 

Raahat e dil .. Mata’ e jaan hai tu

Aye gham e dost jawedaan hai tu

 

Aansoun par bhi tera saya hai

Dhoop k sar pe saibaan hai tu

 

Dil teri dastaras main kyoun na rahay

Is zameen par to aasmaan hai tu

 

Shaam e shehr e udaas k wali !

Aye mere meherbaan kaha hai tu ?

 

Saya e abr e raigaan hoon main

Mauj e beher e bekaraan hai tu

 

Main tahe dast wa gard perahan

Laal o almas ki dukaan hai tu

 

Lamha bhar mil k roothnay walay

Zindagi bhar ki dastaan hai tu

 

Kufr o emaan k fasloun ki qasam

Aye Mata e yaqeen , gumaan hai tu

 

Tera iqraar hai nafi meri

Mere asbaat ka jahaan hai tu

 

Jo muqaddar sanwaar detay hain !

Un sitaroun ki kehkashan hai tu

 

Be nishaan be nishaan khayaam mere

Karvaan karvaan rawaan hai tu

 

Jaltay rehna chiraagh e aakhr e shab

Apne Mohsin ka raazdaan hai tu

– Mohsin Naqvi –

 

Note: To best view this post please install these beautiful Urdu fonts: Alvi Nastaleeq / Jameel Noori (kasheeda) and other fonts from this public shared Urdu Fonts folder
Image is not mine, taken from internet. Image is painting by artist Andre Kohn (link)

رات اس نے پوچھا تھا (Raat us ne poocha tha)

Standard

020713_1750_Issebehterb1.png

chandni-december-ki2

020416_0845_2.png

raat us ne poocha tha

tum ko kaisi lagti hai

chandni December ki ?

main ne kehna chaaha tha

saal o mah ke baray main

guftugu ke kia ma’ni ?

chahay koi manzar ho

dasht ho , samandar ho

June ho , December ho

dharkano ka har naghma

manzaro’n pe bhaari hai

saath jab tumhara ho

Dil koi k sahara ho

aisa lagta hai jaise

ik nasha sa taari hai

lekin us ki qurbat main

kuch nahi kaha maine

takti reh gai mujh ko