Tag Archives: Urdu Shayari

Zakhm phoolo’n ki tarah mehkain gay par dekhe ga kon? (زخم پھولوں کی طرح مہکیں گے پر دیکھے گا کون)

Standard


اب کے رُت بدلی تو خوشبو کا سفر دیکھے گا کون

زخم پھولوں کی طرح مہکیں گے پر دیکھے گا کون

دیکھنا سب رقصِ بسمل میں مگن ہو جائیں گے

جس طرف سے تیر آئے گا ادھر دیکھے گا کون

زخم جتنے بھی تھے سب منسوب قاتل سے ہوئے

تیرے ہاتھوں کے نشاں اے چارہ گر دیکھے گا کون

وہ ہوس ہو یا وفا ہو بات محرومی کی ہے

لوگ تو پھل پھول دیکھیں گے شجر دیکھے گا کون

میری آوازوں کے سائے میرے بام ودر پہ ہیں

میرے لفظوں میں اُتر کر میرا گھر دیکھے گا کون

ہر کوئی اپنی ہوا میں مست پھرتا ہے فرازؔ

شہر نا پرساں میں تیری چشمِ تر دیکھے گا کون

Rah e Shauq Se Ab Hata Chaahta Hoon (رہِ شوق سے اب ہٹا چاہتا ہوں)

Standard

رہِ شوق سے اب ہٹا چاہتا ہوں

کشش حسن کی دیکھنا چاہتا ہوں

کوئی دل سا درد آشنا چاہتا ہوں

رہِ عشق میں رہنما چاہتا ہوں

تجھی سے تجھے چھیننا چاہتا ہوں

یہ کیا چاہتا ہوں ، یہ کیا چاہتا ہوں

خطاؤں پہ جو مجھ کو مائل کرے پھر

سزا اور ایسی سزا چاہتا ہوں

وہ مخمور نظریں وہ مدہوش آنکھیں

خرابِ محبت ہوا چاہتا ہوں

وہ آنکھیں جھکیں وہ کوئی مسکرایا

پیامِ محبت سنا چاہتا ہوں

تجھے ڈھونڈتا ہوں تری جستجو ہے

مزا ہے کہ خود گم ہوا چاہتا ہوں

یہ موجوں کی بے تابیاں کون دیکھے

میں ساحل سے اب لوٹنا چاہتا ہوں

کہاں کا کرم اور کیسی عنایت

مجاز اب جفا ہی جفا چاہتا ہوں

۔ اسرار الحق مجاز ۔

020416_0845_2.png

The beautiful art is by brilliant artist Cyril Rolando (AquaSixio)

Raahat e Dil .. Mata’ e Jaan Hai Tu(راحتِ دل متاعِ جاں ہے تو)

Standard

راحتِ دل متاعِ جاں ہے تو

اے غمِ دوست جاوداں ہے تو

 

آنسوؤں پر بھی تیرا سایہ ہے

دھوپ کے سر پر سائباں ہے تو

 

دل تری دسترس میں کیوں نہ رہے

اس زمیں پر تو آسماں ہے تو

 

شامِ شہر اداس کے والی

اے مرے مہرباں کہاں ہے تو

 

سایہء ابرِ رائیگاں ہوں میں

موجِ بحرِ بیکراں ہے تو

 

میں تہہِ دست وگرد پیرہن

لال و الماس کی دکاں ہے تو

 

لمحہ بھر مل کے روٹھنے والے

زندگی بھر کی داستاں ہے تو

 

کفر و ایماں کے فاصلوں کی قسم

اے متاعِ یقین گماں ہے تو

 

تیرا اقرار ہے نفی میری

میرے اثبات کا جہاں ہے تو

 

جو مقدر سنوار دیتے ہیں

ان ستاروں کی کہکشاں ہے تو

 

بے نشاں بے نشاں خیام میرے

کارواں کارواں رواں ہے تو

 

جلتے رہنا چراغِ آخرِ شب

اپنے محسن کا رازداں ہے تو

۔ محسن نقوی ۔

 

Raahat e dil .. Mata’ e jaan hai tu

Aye gham e dost jawedaan hai tu

 

Aansoun par bhi tera saya hai

Dhoop k sar pe saibaan hai tu

 

Dil teri dastaras main kyoun na rahay

Is zameen par to aasmaan hai tu

 

Shaam e shehr e udaas k wali !

Aye mere meherbaan kaha hai tu ?

 

Saya e abr e raigaan hoon main

Mauj e beher e bekaraan hai tu

 

Main tahe dast wa gard perahan

Laal o almas ki dukaan hai tu

 

Lamha bhar mil k roothnay walay

Zindagi bhar ki dastaan hai tu

 

Kufr o emaan k fasloun ki qasam

Aye Mata e yaqeen , gumaan hai tu

 

Tera iqraar hai nafi meri

Mere asbaat ka jahaan hai tu

 

Jo muqaddar sanwaar detay hain !

Un sitaroun ki kehkashan hai tu

 

Be nishaan be nishaan khayaam mere

Karvaan karvaan rawaan hai tu

 

Jaltay rehna chiraagh e aakhr e shab

Apne Mohsin ka raazdaan hai tu

– Mohsin Naqvi –

 

Note: To best view this post please install these beautiful Urdu fonts: Alvi Nastaleeq / Jameel Noori (kasheeda) and other fonts from this public shared Urdu Fonts folder
Image is not mine, taken from internet. Image is painting by artist Andre Kohn (link)

Dil ishq main be-payan – Ibn e Insha (دل عشق میں بےپایاں)

Standard


دل عشق میں بے پایاں، سودا ہو تو ایسا ہو

دریا ہو تو ایسا ہو، صحرا ہو تو ایسا ہو

 

اک خال سویدا میں، پہنائی دو عالم

پھیلا ہو تو ایسا ہو، سمٹا ہو تو ایسا ہو

 

اے قیس جنوں پیشہ، انشا کو کبھی دیکھا؟

وحشی ہو تو ایسا ہو، رسوا ہو تو ایسا ہو

 

دریا بہ حباب اندر، طوفاں بہ سحاب اندر

محشر بہ حجاب اندر، ہونا ہو تو ایسا ہو

 

ہم سے نہیں رشتہ بھی، ہم سے نہیں ملتا بھی

ہے پاس وہ بیٹھا بھی، دھوکا ہو تو ایسا ہو

 

وہ بھی رہا بیگانہ، ہم نے بھی نہ پہچانا

ہاں اے دل دیوانہ، اپنا ہو تو ایسا ہو

 

اس درد میں کیا کیا ہے، رسوائی بھی لذت بھی

کانٹا ہو تو ایسا ہو، چبھتا ہو تو ایسا ہو

 

ہم نے یہی مانگا تھا، اس نے یہی بخشا ہے

بندہ ہو تو ایسا ہو، داتا ہو تو ایسا ہو

ابن انشاء


Dil ishq mein be-payan, soda ho to aisa ho

Daraya ho to aesa ho, sehra ho to aisa ho

 

Ik khaal sawaida main, pehnai do aalam

Phela ho to aisa ho , simta ho to aisa ho

 

Aey qais e junoon paisha, ~Insha ko kabhi dekha ?

Wehshi ho to aesa ho, ruswa ho to aisa ho

 

Daraya ba habaab ander, toofa’n ba sahaab ander

Mehshar ba-hajaab ander, hona ho to aisa ho

 

Ham say nahi rishta bhi, ham say nahi milta bhi

Hai paas woh betha bhi, dhoka ho to aisa ho

 

woh bhi raha baygana, ham nay bhi na pehchana

Haan ae Dil diwana, apna ho to aisa ho

 

Is dard mein kia kia hay, ruswaai bhi lazzat bhi

Kaanta ho to aesa ho, chubhta ho to aisa ho

 

Ham nay yehi maanga tha, us nay yehi bakhsha hay

banda ho to aesa ho, data ho to aisa ho

~ Ibn e Insha ~

 

Note: To best view this post please install this beautiful font: Jameel Noori Kasheeda 2.0 Font

عکس کتنے اتر گئے مجھ میں

Standard

 


عکس کتنے اتر گئے مجھ میں
پھر نجانے کدھر گئے مجھ میں


یہ جو میں ہوں زرا سا باقی ہوں
وہ جو تم تھے وہ مر گئے مجھ میں


میرے اندر تھی ایسی تاریکی
آ کے آسیب ڈر گئے مجھ میں


میں نے چاہا تھا زخم بھر جایئں
زخم ہی زخم بھر گئے مجھ میں

پہلے اُترا میں دل کے دریا میں
پھر سمندر اُتر گئے مجھ میں

کیسا خاکہ بنا دیا مجھ کو
کون سا رنگ بھر گئے مجھ میں

میں وہ پل تھا جو کھا گیا صدیاں
سب زمانے گزر گئے مجھ میں

بن کے خورشید سامنے آئے
اور پھر رات کر گئے مجھ میں

 

 

(source)