اِس وقت تو یُوں لگتا هے ۔ فیض احمد فیض (Is Waqt To Yun Lagta Hai)

Standard

 

 

فیض کا کمال ہی یہی ھے کہ ان کی نظم کا آغاز چاہے کتنا دُکھی یا نا اُمیدی سے بھرا ہو ,

وہی نظم ایک اُمید دلاتے ہوئے اور ہمیشہ ایک مثبت اور خوش آین امید پہ ختم ہوتی ہے

 

“اِس وقت تو یُوں لگتا هے”

 

اس وقت تو یوں لگتا هے

اب کچھ بھی نہیں هے

مہتاب نہ سورج

نہ اندھیرا نہ سویرا

 

آنکھوں کے دریچوں پہ

کسی حسن کی چلمن

اور دل کی پناهوں میں

کسی درد کا ڈیرا

 

ممکن هے کوئی وہم تھا

ممکن هے سنا هو

گلیوں میں کسی چاپ کا

اک آخری پھیرا

 

شاخوں میں خیالوں کے

گھنے پیڑ کی شاید

اب آ کے کرے گا

نہ کوئی خواب بسیرا

 

اک بَیر، نہ اک مہر

نہ اک ربط نہ رشتہ

تیرا کوئی اپنا

نہ پرایا ، کوئی میرا

 

مانا کہ یہ سنسان گھڑی

سخت کڑی هے

 

لیکن مرے دل !!

یہ تو فقط اک هی گھڑی هے

 

همت کرو جینے کو تو

اک عمر پڑی هے

 

“فیض احمد فیض”

میو هسپتال، لاہور

، مارچ 82ء

 

ذریعہ

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s