Main jis tarah ke bhi khwaab likhun – Mohsin Naqvi (میں جس طرح کے بھی خواب لکھوں – محسن نقوی)

Standard

AquaSixio-Digital-Art-57be93b1d104b__880.jpg

میں آڑھے ترچھے خیال سوچوں

کہ بے ارادہ ۔ ۔ ۔ کتاب لکھوں؟

کوئی ۔ ۔ ۔ شناسا غزل تراشوں

کہ اجنبی ۔ ۔ ۔ انتساب لکھوں ؟

گنوا دوں اک عمر کے زمانے ۔ ۔ ۔

کہ ایک پل کے ۔ ۔ ۔ حساب لکھوں

میری طبیعت پر منحصر ہے

میں جس طرح کا ۔ ۔ ۔ نصاب لکھوں

یہ میرے اپنے مزاج پر ہے

عذاب ۔ ۔ ۔ سوچوں، ثواب ۔ ۔ ۔ لکھوں

 

طویل تر ہے سفر تمہیں کیا؟

میں جی رہا ہوں مگر ۔ ۔ ۔ تمہیں کیا؟

 

مگر تمہیں کیا کہ تم تو کب سے

میرے ۔ ۔ ۔ ارادے گنوا چکے ھو

جلا کے ۔ ۔ ۔ سارے حروف اپنے

میری ۔ ۔ ۔ دعائیں بجھا چکے ھو

میں رات اوڑھوں ۔ ۔ ۔ کہ صبح پہنوں ؟

تم اپنی رسمیں ۔ ۔ ۔ اٹھا چکے ھو

سنا ہے ۔ ۔ ۔ سب کچھ ۔ ۔ ۔ بھلا چکے ھو

 

تو  اب میرے دل پہ ۔ ۔ ۔ جبر کیسا؟

یہ دل تو حد سے گزر چکا ہے

خزاں کا موسم ۔ ۔ ۔ ٹھہر چکا ہے

ٹھہر ۔ ۔ ۔ چکا ہے مگر تمہیں کیا؟

گزر ۔ ۔ ۔ چکا ہے مگر تمہیں کیا؟

 

مگر تمہیں کیا ۔ ۔ ۔ کہ اس خزاں میں

میں جس طرح کے ۔ ۔ ۔ بھی خواب لکھوں

~ محسن نقوی ~

020416_0845_2.png

main aarhay tirchey khayal sochun

ke be-irada … kitaab likhun

koi shanasa … ghazal tarashun

ke ajnabi … antisaab likhun

ganwa’dun ik umr ke zamane …

ke har ik pal ke … hisaab likhun

meri tabiyat pe munhisar hai

main jis tarah ka … nisaab likhun

ye mere apne mizaaj par hai

azaab … sochon , sawaab … likhun

 

taweel tar hai safar, tumhe kya ?

main jee raha hon magar … tumhe kya ?

 

magar tumhe kya ke tum to kab se

mere … iradey ganwa chuke ho

jala ke … saare haroof apne

meri … duaen bhuja chuke ho,

main raat orhon … ke subah pehno’n

tum apni rasmein … utha chuke ho

suna hai … sab kuch … bhula chuke ho

 

to ab mere dil pe … jabar kesa?

ye dil to hadd se guzar chuka hai

khizaan ka mausam … thehar chuka hai

thehar chuka hai magar tumhe kya?

 

magar tumhe kya … ke iss khizaan me

main jis trah ke … bhi khwaab likhun

~ Mohsin Naqvi ~

Image : https://aquasixio.deviantart.com/
Note: To best view this post please install these beautiful Urdu fonts: Alvi Nastaleeq / Jameel Noori (kasheeda) and other fonts from thispublic shared Urdu Fonts folder
Advertisements

عشق ، محبت ، عقیدت

Standard

سنا ہےکہ جب کسی سے عشق ہوتا ہے تو اس سے جڑی ہر چیز سے محبّت اور عقیدت ہو جاتی ہے
اُس کی باتیں
اُس کی کتابیں 
اُس کا گھر 
گھر کے در و دیوار سے
یہاں تک کہ
اُس کے گھر میں لگے فانوس سے بھی عقیدت ہو جاتی ہے 

یا اللہ اپنے آپ کو تیرا عاشق کہنے کے قابل تو نہیں سمجھتا کہ عشق تو دور محبت کا حق بھی نہیں ادا کیا ۔ لیکن یااللہ یہ سچ ہے کہ تیرے اور تیرے حبیب صل اللہ علیہ و آلہ وسلم کے گھر سے ، اس کے در و دیوار سے ، اس کی زمین سے ، اس کی گرد سے ، اس کی ہواوں سے فضاوں سے ، یہاں تک کہ اس کے فانوسوں سے بھی عقیدت و محبت اپنے دِل میں محسوس کی ہے ۔
یا اللہ اس بات کے بہانے اپنے اور اپنے حبیب صل اللہ علیہ و آلہ وسلم کے عاشقوں میں ابد تک کے لیئے میرا نام لکھ دے ۔ آمین 

Zakhm phoolo’n ki tarah mehkain gay par dekhe ga kon? (زخم پھولوں کی طرح مہکیں گے پر دیکھے گا کون)

Standard


اب کے رُت بدلی تو خوشبو کا سفر دیکھے گا کون

زخم پھولوں کی طرح مہکیں گے پر دیکھے گا کون

دیکھنا سب رقصِ بسمل میں مگن ہو جائیں گے

جس طرف سے تیر آئے گا ادھر دیکھے گا کون

زخم جتنے بھی تھے سب منسوب قاتل سے ہوئے

تیرے ہاتھوں کے نشاں اے چارہ گر دیکھے گا کون

وہ ہوس ہو یا وفا ہو بات محرومی کی ہے

لوگ تو پھل پھول دیکھیں گے شجر دیکھے گا کون

میری آوازوں کے سائے میرے بام ودر پہ ہیں

میرے لفظوں میں اُتر کر میرا گھر دیکھے گا کون

ہر کوئی اپنی ہوا میں مست پھرتا ہے فرازؔ

شہر نا پرساں میں تیری چشمِ تر دیکھے گا کون

ہم کہاں کھڑے ہیں؟

Standard

Syeda Tahreem Fatimah Blog

*پاک و ہند کے معروف ترین محدث*

*انور شاہ کشمیری رحمتہ اللہ علیہ*

*کے دنیا سے جانے سے پہلے کہ کچھ ایسی* *باتیں جو کہ ہر بندے کے رونگٹے کھڑے کر دے*

*کہ وہ لوگ اور ہم کہا کھڑے ہیں*؟*

—————————————–

ﻣﯿﮟ ﺣﻀﺮﺕ ﻣﻮﻻﻧﺎ ﺍﻧﻮﺭ ﺷﺎﮦ ﮐﺎﺷﻤﯿﺮﯼ ﺭﺣﻤﺘﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﮐﯽ ﺧﺪﻣﺖ

ﻣﯿﮟ

ﺍﯾﮏ ﺩﻥ ﻧﻤﺎﺯِ ﻓﺠﺮ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﺍﻧﺪﮬﯿﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺣﺎﺿﺮﮬﻮﺍ ﺗﻮ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮐﮧ

ﺣﻀﺮﺕ ﺳﺮ ﭘﮑﮍﮮ ﮨﻮﺋﮯ ﺑﮩﺖ ﻏﻤﺰﺩﮦ ﺑﯿﭩﮭﮯ ﮨﯿﮟ .. ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ ..

” ﻣﺰﺍﺝ ﮐﯿﺴﺎ ﮨﮯ ..؟ ”

ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ” .. ﮨﺎﮞ ! ﭨﮭﯿﮏ ﮨﯽ ﮨﮯ ﻣﯿﺎﮞ .. ﻣﺰﺍﺝ ﮐﯿﺎ ﭘﻮﭼﮭﺘﮯ ﮨﻮ ..

ﻋﻤﺮ ﺿﺎﺋﻊ ﮐﺮ ﺩﯼ ..!”

ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻋﺮﺽ ﮐﯿﺎ .. “ﺣﻀﺮﺕ ! ﺁﭖ ﮐﯽ ﺳﺎﺭﯼ ﻋﻤﺮ ﻋﻠﻢ ﮐﯽ ﺧﺪﻣﺖ

ﻣﯿﮟ

ﺍﻭﺭ ﺩﯾﻦ ﮐﯽ ﺍﺷﺎﻋﺖ ﻣﯿﮟ ﮔﺰﺭﯼ ﮨﮯ .. ﮨﺰﺍﺭﻭﮞ ﺁﭖ ﮐﮯ ﺷﺎﮔﺮﺩ ﻋﻠﻤﺎﺀ

ﮨﯿﮟ

ﺟﻮ ﺁﭖ ﺳﮯ ﻣﺴﺘﻔﯿﺪ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﺧﺪﻣﺖِ ﺩﯾﮟ ﻣﯿﮟ ﻟﮕﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮨﯿﮟ .. ﺁﭖ

ﮐﯽ…

View original post 544 more words

Kaaba pe pari jab pehli nazar (کعبے پہ پڑی جب پہلی نظر)

Standard

2017-03-06 20.48.54

کعبے پہ پڑی جب پہلی نظر، کیا چیز ہے دنیا بھول گیا
یوں ہوش و خرد مفلوج ہوئے، دل ذوقِ تماشہ بھول گیا

پھر روح کو اذنِ رقص ملا، خوابیدہ جُنوں بیدار ہوا
تلؤوں کا تقاضا یاد رھا نظروں کا تقاضا بھول گیا

احساس کے پردے لہرائے، ایمان کی حرارت تیز ہوئی
سجدوں کی تڑپ اللہ اللہ، سر اپنا سودا بھول گیا

پہنچا جو حرم کی چوکھٹ تک، اک ابر کرم نے گھیر لیا
باقی نہ رہا پھر ہوش مجھے، کیا مانگا اور کیا کیا بھول گیا

جس وقت دعا کو ہاتھ اٹھے، یاد آ نا سکا جو سوچا تھا
اظہارِ عقیدت کی دُھن میں اظہارِ تمنا بھول گیا

ہر وقت برستی ہے رحمت کعبے میں جمیل ، اللہ اللہ
خاکی ہوں میں کتنا بھول گیا

عاصی ہوں میں کتنا بھول گیا

کعبے پہ پڑی جب پہلی نظر، کیا چیز ہے دنیا بھول گیا
یوں ہوش و خرد مفلوج ہوئے، دل ذوقِ تماشہ بھول گیا

020416_0845_2.png

اللہ عزوجل رب العزت  الرحمان الرحیم الکریم نے

مجھ حقیر فقیر خاکی و عاصی گنہگار پہ خاص کرم کیا اور مجھے اپنے ماں باپ اور بیوی بچہ سمیت اپنے گھرپر حاضری کا  شرف بخشا  اور اپنے حبیب صل اللہ علیہ وآلہ وسلم کے روضہ اطہر پہ بھی حاضری کا شرف بخشا

ساری زندگی ہر سانس کے ساتھ اللہ رب العزت کا شکر کروں تو ایک لمحے کا بھی حق ادا نہیں ہو سکتا ۔  جو کیفیت اور احساسات وہاں ہوتے ہیں اُنہیں صحیح معنی میں الفاظ کے محدود احاطے میں بیان کرنا نہ ممکن ہے ۔  مکہ مکرمہ میں بیت اللہ شریف  میں اللہ کا جلال اور عظمت رُو پزیر ہے ۔  اور مدینہ منورہ میں خاتم النبیین رحمت اللعالمین صل اللہ علیہ و آلہ وسلم کی رحمت ، محبت ، انوارات کے نور اور سکون کا سماں ہے ۔ بندہ وہاں جا کر ، بلکہ جب یہاں سے رختِ سفر ہی باندھتا ہے تو دنیا کی سوچیں ، پریشانیاں ، بکھیڑے ، مستقبل کی فکر   ، غرض ہر چیز سے بے فکر اور بے نیاز ہو جاتا ہے ۔  یہ بھی اللہ کا کرم اور فضل ہے ۔

اللہ مجھے  اور سب کو بار بار اپنے گھر بلائے اور اپنے حبیب ہمارے آقا سرکارِ عالم رحمت العالمین نبیِ رحمت حضرت محمد مصطفٰی صل اللہ علیہ و آلہ وسلم کے روضہ مبارک پہ حاضری کی توفیق عطا فرمائے آمین

کوشش کروں گا کے اپنے سفرِ حرم کے اور خیالات اور واقعات یہاں گوشگزار کروں

Transliteration in roman urdu:

Allah Azawajal Rab ul Izzat Al Rahman Ak Raheem Al Kareem ne

Mujh haqeer faqeer khaki o aassi gunehgaar pay khaas karam kya aur mujhe apne maa baap aur biwi bachay sameit Apne ghar par haazri ka sharf bakhsha aur Apne Habib SalAllah o Aleh Wa Aalehi Wasallam ke Roza At’her pay bhi haazri ka ssharf bakhsha

Saari zindagi har saans ke sath Allah Rab ul Izzat ka shukar karoon to aik lamhay ka bhi haq ada nahi ho sakta. jo kefiyat aur ehsasaat wahan hotay hain unhen sahih maienay mein alfaaz ke mehdood ihatay mein bayan karna na mumkin hai. Makkah  Mukaramah mein Bait Ullah Shareef mein Allah ka Jalaal aur Azmat roo pazeer hai, aur Madina Munawwara mein Khaatim ul Nabiyeen Rehmat ulilaalameen Salallah o Aleh Wa Aalehe Wa Sallam ki Rehmat, Mohabbat, Anwaraat ke Noor aur Sukoon ka samaa hai. Banda wahan ja kar, balkay jab yahan se rakhtِ e safar hi baandhta hai to duniya ki sochen, pareshaniya, bakherray, mustaqbil ki fikr, gharz har cheez se be-fikar aur be-niaz ho jata hai. yeh bhi Allah ka karam aur fazl hai .

Allah mujhe aur sab ko baar baar Apne ghar bulaye aur apne Habib hamaray Aaqa Sarkar e Aalam Rehmat Ulilaalameen Nabi e Rehmat Hazrat Muhammad Mustafa Salalallah o Alehe Wa Aalehe Wasallam ke Roza Mubarak pay haazri ki tofeeq ataa farmaye Ameen

Koshish karoon ga ke apne safrِ e haram ke aur khayalat aur waqeat yahan gosh-guzar karoon