Kaha tha na … (کہا تھا ناں)

Standard

کہا تھا ناں

مجھے تم اس طرح سوتے ہوئے مت چھوڑ کر جانا

مجھے بےشک جگا دینا

بتا دینا

محبت کے سفر میں ساتھ میرے چل نہیں سکتی

جدائی میں ، ہجر میں ، ساتھ میرے چل نہیں سکتی

تمہیں رستہ بدلنا ہے

مری حد سے نکلنا ہے

تمہیں کس بات کا ڈر تھا ؟

تمہیں جانے نہیں دیتا ؟

کہیں پہ قید کر لیتا ؟

ارے پگلی ۔ ۔ ۔

محبت کی طبیعت میں

زبردستی نہیں ہوتی

جسے رستہ بدلنا ہو ، اسے رستہ بدلنے سے

جسے حد سے نکلنا ہو، اسے حد سے نکلنے سے

نہ کوئی روک پایا ہے

نہ کوئی روک پائے گا

۔ ۔ ۔

تمہیں کس بات کا ڈر تھا ؟

مجھے بےشک جگا دیتی

میں تم کو دیکھ ہی لیتا

تمہیں کوئی دعا دیتا

کم از کم یوں تو نہ ہوتا

میرے ساتھی ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔

حقیقت ہے ۔ ۔ ۔

تمھارے بعد کھونے کے لیے کچھ بھی نہیں باقی

مگر کھونے سے ڈرتا ہوں

میں اب سونے سے ڈرتا ہوں

(۔ عاطف سعید ۔)


kaha tha na !!

mujhe is tarah sotay hoye mat chor k jana

mujhe beshak jagga dena

bata dena

muhabbat k safar mein saath meray chal nahi sakti

judai main, hijr main, saath meray chal nahi sakti

tumhain rasta badalna hai

meri had se nikalna hai

tumhain kis baat ka dar tha ?

tumhain jaanay nahi deta ?

kahin pe qaid kar leta ?

aray pagli … !

muhabbat ki tabiyat mein

zabardasti nahi hoti

jisay rasta badalna ho . . . usay rasta badalnay se

jisay had se nikalna ho . . . usay had se nikalnay se

na koi rok paya hai

na koi rok paye ga

tumhain kis baat ka dar tha ?

mujhe beshak jagga deti

main tum ko “dekh” hi leta

tumhain koi dua deta

kam az kam yun to na hota …

mere sathi … haqeeqat hai !

tumharay baad khonay k liye kuch bhi nahi baqi…

magar khonay se darta hoon

main ab sonay se darta hoon!

(Atif Saeed)

Advertisements

4 responses »

  1. برسوں کے بعد ديکھا اک شخص دلرُبا سا
    اب ذہن ميں نہيں ہے پر نام تھا بھلا سا

    ابرو کھنچے کھنچے سے آنکھيں جھکی جھکی سی
    باتيں رکی رکی سی لہجہ تھکا تھکا سا

    الفاظ تھے کہ جگنو آواز کے سفر ميں
    بن جائے جنگلوں ميں جس طرح راستہ سا

    خوابوں ميں خواب اُسکے يادوں ميں ياد اُسکی
    نيندوں ميں گھل گيا ہو جيسے رَتجگا سا

    پہلے بھی لوگ آئے کتنے ہی زندگی ميں
    وہ ہر طرح سے ليکن اوروں سے تھا جدا سا

    اگلی محبتوں نے وہ نامرادياں ديں
    تازہ رفاقتوں سے دل تھا ڈرا ڈرا سا

    کچھ يہ کہ مدتوں سے ہم بھی نہيں تھے روئے
    کچھ زہر ميں بُجھا تھا احباب کا دلاسا

    پھر يوں ہوا کے ساون آنکھوں ميں آ بسے تھے
    پھر يوں ہوا کہ جيسے دل بھی تھا آبلہ سا

    اب سچ کہيں تو يارو ہم کو خبر نہيں تھی
    بن جائے گا قيامت اک واقعہ ذرا سا

    تيور تھے بے رُخی کے انداز دوستی کے
    وہ اجنبی تھا ليکن لگتا تھا آشنا سا

    ہم دشت تھے کہ دريا ہم زہر تھے کہ امرت
    ناحق تھا زعم ہم کو جب وہ نہيں تھا پياسا

    ہم نے بھی اُس کو ديکھا کل شام ااتفاقاً
    اپنا بھی حال ہے اب لوگو فراز کا سا

    کلام : احمد فراز ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s